Connect with us

انٹرنیشنل

فیصلےکیخلاف ہنگامے،4 ہلاک

شائع شدہ

کو

فیصلےکیخلاف ہنگامے،4 ہلاک

بھارت میں اقلیتوں کے حقوق کے قانون سے متعلق متنازع عدالتی فیصلے کے خلاف ہنگامے پھوٹ پڑے جس کے نتیجے میں 4 افراد ہلاک اور سیکڑوں زخمی ہوگئے۔ دلت تنظیموں کی جانب سے سپریم کورٹ کے فیصلے کے خلاف ’بھارت بند‘ ہڑتال کے دوران کئی شہروں میں حالات کشیدہ ہوگئے۔ کاروبار، تعلیمی ادارے اور ٹرانسپورٹ مکمل طور پر بند ہے۔ مشتعل افراد سڑکوں پر نکل آئے اور جلاؤ گھیراؤ پتھراؤ شروع کردیا۔ میرٹھ میں ایک تھانے اور کئی گاڑیوں کو جلا دیا گیا، پٹنا میں مختلف مقامات پر ٹرینیں روکی گئیں۔ گوالیار شہر میں بگڑتی صورت حال کو قابو میں رکھنے کے لیے انٹرنیٹ، موبائل اور ٹی وی نشریات پر پابندی کے علاوہ شہر میں کرفیو نافذ کردیا گیا جب فوج کو بھی ہائی الرٹ کردیا گیا۔ اقلیتوں کو مظالم سے بچانے کے ایکٹ (1989 Prevention of Atrocities) کے تحت گرفتاریوں اور مقدمات کے اندراج پر بھارتی سپریم کورٹ نے پابندی عائد کردی ہے۔ اس پر بھارت میں نچلی ذات تصور کیے جانے والی دلت قوم میں بے چینی اور غم و غصے کی لہر دوڑ گئی ہے۔ دلتوں کی نمائندگی کرنے والی تقریباً تمام ہی جماعتوں نے عدالتی فیصلے کے خلاف صوبے بھر میں احتجاج کا اعلان کر رکھا ہے۔ بھارتی حکومت نےسپریم کورٹ کے فیصلے کے خلاف نظر ثانی کی درخواست دائر کردی ہے۔ اتر پردیش کے سیاحیت مقام گوالیار میں جاری احتجاج کے دوران حالات کشیدہ ہو گئے ہیں جن سے نمٹنے کے لیے صوبائی حکومت نے نہ صرف یہ کے انٹرنیٹ، موبائل اور ٹی وی نشریات بند کردی ہیں بلکہ شہر میں کرفیو نافذ کردیا ہے۔ اب تک کی موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق گوالیار میں مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپ میں 4 شہری ہلاک اور درجنوں زخمی ہو گئے ہیں۔ دوسری جانب وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ کے فیصلے پر نظر ثانی کے لیے پٹیشن دائر کردی گئی ہے جس کے بعد مظاہرین کو پُر امن طور پر منتشر ہو جانا چاہیے تھا لیکن اب بھی لدھیانہ سمیت پنجاب کے دیگر علاقوں میں پُر تشدد ہنگاموں کا سلسلہ جاری ہے جس کے دوران 15 بسوں کو نذر آتش کردیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ 20 مارچ کو بھارتی سپریم کورٹ نے اقلیتوں کے تحفظ کو یقینی بنانے لیے نافذ کیے گئے ایکٹ 1989 کے تحت خودکار گرفتاریوں اور مقدمات کے اندراج پر پابندی عائد کردی تھی۔ دلت سمیت اقلیتی برادریوں نے اس پابندی کے خلاف ملک گیر احتجاج کا اعلان کیا تھا۔

انٹرنیشنل

اسٹیبلشمنٹ کی مداخلت کھلی حقیقت

شائع شدہ

کو

اسٹیبلشمنٹ کی مداخلت کھلی حقیقت

پاکستان میں جب بھی عام انتخابات کا وقت آتا ہے تو مغربی میڈیا میں ایسی رپورٹس آنا شروع ہو جاتی ہیں کہ جن کے باعث انتخابات کی شفافیت پر سوالات اٹھنے لگتے ہیں۔ اب ایک بار پھر یہی صورتحال ہے۔ ایک جانب سیاسی عمل کے آزادانہ اور منصفانہ ہونے پر سوالات اٹھائے جا رہے ہیں اور دوسری جانب اس صورتحال کے لئے ایک بار پھر ’اسٹیبلشمنٹ‘ کو ذمہ دار ٹھہرایا جا رہا ہے۔ معروف برطانوی جریدے ”دی اکانومسٹ“ کا پاکستانی انتخابات کے بارے میں تازہ ترین مضمون ایک ایسی ہی کاوش نظر آتی ہے۔ جریدے کا کہنا ہے کہ ”چند دن بعد ہونے والے عام انتخابات میں عمران خان کی فتح یقینی نظر آرہی ہے، لیکن ایک بار پھر یہ روایتی میچ فکسنگ دکھائی دے رہی ہے، (جس پر یہی کہا جاسکتا ہے کہ) اب وقت آچکا ہے کہ پاکستانی جرنیل سیاست میں دخل اندازی بند کردیں۔“
پاکستان تحریک انصاف کے لئے فتح کی راہ ہموار کرنے کا الزام اسٹیبلشمنٹ پر لگاتے ہوئے لکھا گیا ہے کہ ”سروے ظاہر کررہے ہیں کہ 25 جولائی کو ہونے والے انتخابات میں فتح پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کو ملنے والی ہے اور عمران خان اگلے وزیراعظم ہوں گے۔ اگرچہ اسٹیبلشمنٹ اور عمران خان اس بات کی تردید کرتے ہیں لیکن اسٹیبلشمنٹ اس بات کو یقینی بنارہی ہے کہ پی ٹی آئی کو میڈیا پر ترجیحی کوریج ملے، طاقتور حلقے اس کی حمایت کریں، اور مخالف پارٹیوں کو نقصان پہنچایا جارہا ہے۔ عمران خان کے سب سے بڑے مخالف نواز شریف اور ان کی بیٹی مریم نواز جیل جا چکے ہیں جبکہ دیگر مخالف پارٹیوں کو بھی ہراساں کیا جارہا ہے۔ کچھ سیاسی رہنماﺅں پر دہشتگردی کے حملے بھی ہوچکے ہیں، جن میں درجنوں اموات ہوچکی ہیں۔“
جریدے کا مزید کہنا ہے کہ طاقتور حلقوں کی جانب سے میڈیا پر اثر انداز ہونے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ اس حوالے سے لکھا گیا ہے کہ ”اسٹیبلشمنٹ کی جانب سے پاکستانی سیاست میں مداخلت پہلے بھی کی جاتی رہی ہے لیکن جس طرح یہ کام کھلے عام اب ہورہا ہے اس سے پہلے کبھی نہیں ہوا تھا۔ ممتاز صحافیوں اور میڈیا ہاﺅسز کا کہنا ہے کہ ان پر پاکستان تحریک انصاف کی حمایت اور اس کے مخالفین کی کوریج محدود کرنے کیلئے دباﺅ ڈالا جارہا ہے۔“

پڑھنا جاری رکھیں

انٹرنیشنل

8 سال مزید سزا

شائع شدہ

کو

8 سال مزید سزا

جنوبی کوریا کی سابق صدر پارک گُن ہے کو انتخابات میں مداخلت کرنے کے جرم میں 8 سال قید کی سزا کا حکم سنایا ہے۔ دارالحکومت سیئول کی عدالت نے پارک گُن ہَے کو غیر ضروری فنڈ جمع کرنے کے جرم میں 6 سال اور انتخابی عمل میں بیجا مداخلت پر اضافی دو سال سزائے قید سنائی ہے۔ دوسری جانب سابق کوریائی صدر نے کہا ہے کہ یہ الزامات سیاسی مخالفت کا نتیجہ ہیں جو کہ عدالت میں فیصلہ سننے کے لیے موجود نہیں تھیں۔
یاد رہے کہ بدعنوانی الزامات اور حکومتی راز افشاء کرنے پر پارک گُن ہے 24 سال کی سزا پہلے ہی بھگت رہی ہیں۔ انہیں سن 2017 میں منصبِ صدارت سے ہٹا دیا گیا تھا۔

پڑھنا جاری رکھیں

انٹرنیشنل

ترکی کا انکار

شائع شدہ

کو

ترکی کا انکار

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق آسٹریلیا نے ترکی میں قید اپنے مطلوب ترین دہشت گرد نیل پرکاش المعروف ابو خالد الکمبوڈی کی حوالگی کے لیے ترک حکومت سے رجوع کیا تھا تاہم ترک عدالت نے آسٹریلیا کی درخواست مسترد کرتے ہوئے ابو خالد الکمبوڈی کے خلاف مقدمات کی سماعت ترکی میں ہی کرنے کی ہدایت کی ہے۔ آسٹریلوی حکومت نے ترکی کی عدالت کے فیصلے کو مایوس کن قرار دیتے ہوئے موقف اختیار کیا ہے کہ ابو خالد ایک آسٹریلوی شہری ہے جس پر دہشت گردی سمیت متعدد مقدمات قائم ہیں جن کی تفتیش کے لیے ابو خالد الکمبوڈی کی حوالگی ضروری ہے جس کے لیے آسٹریلوی وزیراعظم نے گزشتہ برس مئی میں ترک حکومت سے استدعا کی تھی۔ واضح رہے کہ داعش کمانڈر نیئل پرکاش آسٹریلوی شہری ہے جس کے والد کا تعلق فجی اور والدہ کا کمبوڈیا سے تھا۔ 2012 میں کمبوڈیا کے دورے دوران اس نے بدھ ازم ترک کر کے اسلام قبول کیا تھا اور ابو خالد الکمبوڈی کے نام سے داعش کے لیے کام شروع کیا تاہم 2016 میں شام کی سرحد عبور کر کے ترکی میں داخل ہونے کی کوشش کے دوران گرفتار ہو گیا تھا۔

پڑھنا جاری رکھیں

مقبول خبریں