Connect with us

شوبز

پی ٹی وی.... درست کون کرے گا

شائع شدہ

کو

پی ٹی وی.... درست کون کرے گا

پی ٹی وی ایک سٹیٹ چینل ہے بلکہ آٹھ دس چینلز کا گلدستہ جن میں سے سپورٹس کا چینل اس کا کماؤ پوت ہے اس کے علاوہ کوئی پی ٹی وی دیکھے نا دیکھے اگر بجلی استعمال کر رہا ہے تو 35 روپے فی میٹر پی ٹی وی لائسنس کی مد میں ادا کرتا ہے جو اربوں روپے مالیت کا فنڈ بن جاتا ہے - اس ادارے کی کوئی کل سیدھی نہیں اس کی بڑی وجہ ہر حکومت کی سیاسی مداخلت ہے جس کی وجہ سے اس ادارے میں میرٹ اور پالیسی کے تسلسل کا شدید فقدان پایا جاتا ہے جو کسی بھی ادارے کی بقا اور کامیابی کے لئے بہت ضروری سمجھا جاتا ہے. ایک زمانے میں اس ادارے نے بہت عروج پایا جیسا کہ ہمارے دوسرے ادارے ترقی کی طرف گامزن تھے جو سیاسی مداخلت کی وجہ سے انحطاط کا شکار ہوتے چلے گئے .یہاں اس امر کا ذکر ضروری ہے کہ پی ٹی وی نے جمہوری ادوار کی نسبت مارشل لا کے ادوار میں زیادہ ترقی کی . یوسف بیگ مرزا میاں نواز شریف کے تعینات کئے گئے پہلے ایم ڈی تھی جنھوں نے اس ادارے کی ترقی و ترویج میں پرائیویٹ شعبے کے اشتراک کو ضروری خیال کیا .موصوف تین بار ایم ڈی بنے اور ہر بار کرپشن پر نکلے مگر ان کے دور میں ریونیو یعنی کمائی بہت ہوئی لیکن بعد میں آنے والے ایک ایم ڈی نے بتایا کہ وہ مصنوعی ترقی تھی انہوں نے ملازمین کے بعد از ریٹائرمنٹ واجبات تک کو اپنی کارکردگی کے اعداد وشمار میں دکھایا .ایک ھموار پالیسی نہ ہونے کے باعث ایم ڈی کی پوسٹ اکثر متنازعہ رہی .مالک صاحب کے آنے کے بعد اور شاکر عزیر کی ڈائریکٹر شپ میں پی ٹی وی کی سکرین بہتر ہوئی اس کے بعد آئے چیئرمین عطاء الحق قاسمی صاحب ،ان سے پہلے یہ پوسٹ ایک طرح کی اعزازی حیثیت کی پوسٹ ہوا کرتی تھی پرویز رشید بھی اس پوسٹ پر رہے مگر اس طرح سے فعال نہ رہے جیسے کہ اپنے قاسمی صاحب ، قاسمی صاحب سے پہلے ایک دو ڈرامے سرکاری شعبے میں منظور ہو چکے تھے انھوں نے آکر پی ٹی وی کے احیا کا بیڑا اٹھایا جو سب کے لئے بہت اچھی خبر تھی. اس کے لئے ایک خفیہ پالیسی وضع کی گئی کہ پرائیویٹ شعبے سے کوئی ڈرامہ نہ خریدا جائے اور اس پالیسی کو اعلانیہ اختیار نہ کیا جائے اس کا اعتراف محترم قاسمی صاحب نے روزنامہ جنگ میں شائع اپنے کالم میں بھی کیا ہے -جانے کس مصلحت کی بنا پر اس پالیسی کو خفیہ رکھا گیا. پریویو کمیٹی باقاعدگی سے بیٹھتی تھی اور ہر ڈرامہ کامیابی سے ریجیکٹ بھی کرتی تھی اور اس کی بے سروپا وجوہ بھی بیان کرتی تھی اس طرح سینکڑوں ڈراموں کا قتل عام کیا گیا جس سے ڈرامہ انڈسٹری خاص طورپر لاہور کی ڈرامہ انڈسٹری میں شدید بد دلی پھییل گئ. ادارے بند ہونے لگے تکنیک کار بھوکے مرنے لگے کچھ کام چھوڑ گئے کچھ دوسرے شہروں کا رخ کر گئے پروڈیوسرز کے کروڑوں روپے ڈوب گئے .پی ٹی وی کی پرائیویٹ ڈرامے کی پالیسی نے لاھور کی ڈرامہ انڈسٹری کو زندہ رکھا ہوا تھا کیونکہ لاھور کا پروڈیوسر عام طور پر کراچی کے چکروں سے بچنے کے لئے پی ٹی وی پر ہی کام کرتا آرہا تھا وہ بہت پیچھے چلا گیا- یہ بہت بڑا ظلم کیا گیا اس جھوٹ میں اوپر سے لے کر نیچے تک سب افسران شامل بوجہ مصلحت شامل رہے نوکری کے ڈر سے ، اس صورت حال کا دوسرا پہلو یہ ہے کہ سکرین روکھی پھیکی اور ویران ہو گئی ہوم پروڈکشن میں ایک سٹ کام بہت مہنگا بنایا گیا جو بہت بری طرح فلاپ ہوا جبکہ اس سے بہتر سٹ کام پی ٹی وی دو سے اڑھائی لاکھ فی قسط مارکیٹ سے خریدتا رہا ہے. ایک اور غیر معیاری سٹ کام "نواب گھر" بڑی ڈھٹائی سے جاری ہے جبکہ "نمک" اور "رسمیں" بھی ھوم پروڈکشن کے باوجود نجی شعبے سے مہنگے پڑے ہیں. قاسمی صاحب نے ادارے کے احیا کے لئے دو میگزین شو بھی شروع کروائے جس میں سے ایک میں وہ خود بھی شرکت کرتے. پی ٹی وی میں میگزین شوکا بجٹ نوے ہزار سے ایک لاکھ دس ہزار سے زیادہ نہیں ہوتا مگر اس کی تشہیر پر جیسا کہ بتایا گیا پاکستان کے بڑوں شہروں یعنی تمام سینٹرز پر لاکھوں کے بل بورڈز لگائے گئے. میگزین شوز کو عام طور پر پرئم ٹائم میں نہیں چلایا جاتا کیونکہ انہیں بزنس نہیں ملتا مگر یہ شو پرائم ٹائم میں چلانے سے بزنس متاثر کرنے کا موجب بنا اور قاسمی صاحب کے حاسدین کو باتین کرنے کا موقع ملا .ہر ایم ڈی اور چیئر مین کے جانے کے بعد اس طرح کی باتیں ہوتی ہیں ،انکوائریاں اور تحقیقات بھی چلتی ہیں لیکن ہوتا کچھ بھی نہیں. سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ آخر پی ٹی وی کو کون سیدھا کرے گا اور کس طرح کرے گا کیونکہ جو بھی آتا ہے اسے اپنے مفادات عزیز ہوتے ہیں.

شوبز

ڈیڈی مان گئے

شائع شدہ

کو

ڈیڈی مان گئے

بالی ووڈ ایکٹرسیف علی خان کی بیٹی اداکارہ سارہ علی خان کی خوبصورتی اورمقبولیت میں دن بدن اضافہ ہورہا ہے اوریہ سب جان کروہ بے حد خوش ہیں-واضح ہوکہ سارہ علی خان کواپنے فنی کیرئیرکی پہلی فلم"کیدارناتھ"کی وجہ سے بہت سے تنازعات کا سامنا کرنا پڑاتھا لیکن اب وہ ایک بارپھرخود پر اوراپنی کیرئیرپرتوجہ مرکوزکئے ہوئے ہیں -سارہ علی خان کا کہنا ہرکہ پہلی فلم کے بعد ڈیڈی نے مجھے مزید فلمیں کرنے روک دیا تھا لیکن ان وہ اچھے موضوعات کی حامل فلموں میں کام کرنے کی اجازت دے چکے ہیں-انھوں نے بتایا کہ میں ان دنوں باقائدگی سے جم جارہی ہوں اورشائد اسی لئے میری خوبصورتی کے دیوانے ہوتے چلے جارہے ہیں-اوربہت سے بڑے ہدایت کاروں نے فلمیں آفرکی ہیں-

پڑھنا جاری رکھیں

شوبز

دبنگ خان بننے سے انکار

شائع شدہ

کو

دبنگ خان بننے سے انکار

سلمان خان اور رنبیر کی سرد جنگ طویل عرصے سے جاری ہے یہی وجہ ہے کہ دونوں ایک دوسرے کو تقریبات میں نظر انداز کرتے ہیں۔ حال ہی میں فلم ’سنجو‘ بارے سلمان خان نے ان کے کردار پر ڈھکے چھپے انداز میں تنقید کی تھی جس کے جواب میں ہدایت کار راج کمار ہیرانی نے بیان دیا تھا لیکن اب رنبیر نے بھی سلمان خان پر جملہ کس دیا کہ مجھے دبنگ خان کی طرح کنوارہ نہیں رہنا ہے اور شادی کرنی ہے سلمان ایک ہی پیدا ہوا ہے اور ان جیسا کوئی نہیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

شوبز

ناکام کوشش

شائع شدہ

کو

ناکام کوشش

نبیل قریشی کی فلم"لوڈ ویڈنگ" کا پہلا ٹریلر ریلیز کردیا گیا ہے جس میں مرکزی اداکاروں کے کردار سامنے آگئے۔2 منٹ 46 سیکنڈ پر مبنی اس ٹریلر میں فہد مصطفیٰ اور مہوش حیات کودکھایا گیا ہے جو ایک دوسرے سے بےانتہا محبت کرتے ہیں اور شادی کرنا چاہتے ہیں، لیکن ان کی شادی تب تک نہیں ہوگی جب تک فہد کی بڑی بہن کی شادی نہیں ہوجائے گی۔اور یہی وجہ ہے کہ ان دونوں کو بہت سے مسائل کا سامنا کرنا پڑے گا۔فلم کے ٹریلر میں بہت سے مزاحیہ لمحات بھی سامنے آئے جیسے ایک موقع پر گیم شو کا منظر پیش کیا جب فہد مصطفیٰ اور مہوش حیات وہاں موجود میزبان سے تحفے مانگ رہے ہیں۔
یقیناً آپ کو بھی پاکستان کے بہت سے نامور گیم شوز کے میزبان یاد آگئے ہوں گے، جن میں سے ایک خود فہد مصطفیٰ بھی ہیں۔تاہم فلم کی کہانی کچھ زیادہ سمجھ نہیں آئی، کیوں کہ ایک مختصر ٹریلر میں فلم کے اہم پہلوؤں کو پیش کرنے کی ناکام کوشش کی گئی۔حال ہی میں فلم کا پہلا ٹیزر ریلیز ہوا تھا، جس کے بعد اس فلم کے ٹریلر سے بہت سی امیدیں وابستہ ہوگئیں تھی، تاہم فلم کا پہلا ٹریلر بہت زیادہ متاثر کرنے میں کامیاب نہیں رہا۔

ناکام کوشش

ناکام کوشش

پڑھنا جاری رکھیں

مقبول خبریں