سعودی ولی عہد کی آمد اور بھارتی سازشیں

تحریر: کامران گورائیہ

خطے میں امن و امان کی دیرپا قیام کے لیے پاکستان کی کوششوں کے نتیجہ میں جب بھی کوئی مثبت پیشرفت ہونے لگتی ہے تو غیر ملکی طاقتیں مخالفانہ سرگرمیوں کا آغاز کر دیتی ہیں ۔ خاص طور پر بھارت پاکستان میں ہونے والی تمام اہم سرگرمیوں اور پیشرفت کے حوالہ سے پریشانی میں مبتلا ہو کر سازشوں کا سلسلہ شروع کر دیتا ہے۔ سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان ان دنوں تاریخ ساز دورہ پر پاکستان آئے ہوئے ہیں ان کی آمد سے دو روز قبل مقبوضہ کشمیر میں خود کش حملہ بھی بھارت کی رچائی ہوئی ایک ایسی سازش ہے جس کا الزام پاکستان پر لگایا جا رہا ہے ۔پچھلے ایک ماہ کے دوران پاکستان نے امریکا اور افغان طالبان کے درمیان نتیجہ خیز مذاکرات کروانے میں سہولت کار کا کردار ادا کر کے ایسے نتائج دیئے جسے خود امریکا نے بھی حوصلہ افزاء قرار دیا۔ امریکا کے علاوہ بہت سے دیگر عالمی قوتیں اور ممالک افغان طالبان سے امن مذاکرات کو پاکستان کی بڑی سفارتی کامیابی قرار دے رہے ہیں۔ یورپ اور امریکا سمیت عرب دنیا نے بھی امریکا اور افغان طالبان کے درمیان ہونے والے امن مذاکرات کو ناصرف جنوبی ایشیاء بلکہ پوری دنیا میں قیام امن کے لیے خوش آئند قرار دیا۔ بھارت ہمیشہ سے خطہ میں امن و امان کے لیے کئی جانے والی کوششوں کو سبوتاژ کرنے کے لیے سازشوں میں مصروف رہا ہے۔ ممبئی حملے ہوں یا پھر سمجھوتہ ایکسپریس پر دہشت گرد حملہ بھارت نے ہمیشہ پاکستان کو مورد الزام ٹھہرایا ۔ پاکستان اور بھارت کے درمیان ہمیشہ ہی سے مسئلہ کشمیر کو لے کر اختلافات رہے ہیں یہ بھی ایک تلخ حقیقت ہے کہ بھارت میں جب بھی انتخابات کا وقت قریب آتا ہے تو وہاں کی سیاسی جماعتیں پاکستان مخالفت کو سلوگن بنا کر انتخابی میدان میں اترتی ہیں ۔ مودی سرکار بھی ایک بار پھر بھارت میں ہونے والے عام انتخابات میں پاکستان کو ملوث کرنے کا حربہ استعمال کر رہی ہے کبھی اسٹرٹیجک سرجیکل سٹرائیک ہو یا پھر ایل او سی پر ہونے والی اشتعال انگیزیاں بھارت نے ہمیشہ پاکستان کو امن تباہ کرنے کا ذمہ دار قرار دیا ہے اور دنیا کو باور کروانے کی کوشش کی کہ پاکستان خطے میں امن و امان کے قیام میں سنجیدہ نہیں ہے بلکہ وہ دہشت گردی کے واقعات میں ملوث ہے جس کا نوٹس لیا جانا چاہیے مگر اقوام متحدہ ، امریکا اور یورپ یا پھر عالمی سطح پر انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والی تنظیمیں سبھی اس حقیقت سے بخوبی آگاہ ہیں کہ بھارت کھلے عام مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کو پامال کرنے اور نہتے کشمیریوں پر بربریت اور ظلم و ستم کے پہاڑ توڑنے سے باز نہیں آ رہا ۔ یہی نہیں بلکہ بھارت کی ہٹ دھرمی اس حد تک بڑھ چکی ہے کہ وہ اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کے عالمی مبصرین کو مقبوضہ وادی کا دورہ کرنے کی اجازت نہیں دیتا اس کے برعکس پاکستان نے ہمیشہ غیر ملکی مبصرین کو آزاد کشمیر سمیت ملک بھر کے دورے کرنے کی دعوت مسلسل دیتا آیا ہے۔ پاکستان اس بات کی اہمیت کو بخوبی سمجھتا ہے کہ افغانستان میں امن کا قیام خطے کے وسیع تر مفاد میں ہے ۔ پاکستان اور افغانستان کا امن ناصرف جنوبی ایشیاء بلکہ دنیا بھر میں امن و امان سے وابستہ ہے، بھارتی ہٹ دھرمی ہمیشہ ہی سے خطے میں امن و امان کے قیام میں رکاوٹ رہی ہے۔ 

2015ء میں چینی صدر کے دورہ پاکستان کے نتیجہ میں سی پیک اور ون بیلٹ ون روڈ منصوبہ کے آغاز پر بھی بھارت کے پیٹ میں درد ہونے لگ گئی تھی اور اس نے پاکستان کی مخالفت میں سازشوں کا آغاز کر دیا تھا ۔ بھارت افغانستان میں اپنا اثرورسوخ بڑھا چکا ہے کہ وہاں پر بیٹھ کر پاکستان میں دہشت گردی پھیلا رہا ہے ۔ پاکستانی حدود میں دہشت گردی کے جتنے بھی واقعات رونما ہوئے ان میں بھارت کی خفیہ ایجنسیوں کے ملوث ہونے کے ٹھوس شواہد موجود ہیں جنہیں پاکستان تمام عالمی فورمز پر پیش کر چکا ہے۔ بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو بھی پاکستان میں دہشت گرد کارروائیوں میں ملوث ہونے کا اعتراف کر چکا ہے مگر بھارت اسے اپنا شہری تسلیم کرنے سے مسلسل انکار کر رہا ہے جبکہ یہ بات بھی ریکارڈ میں موجود ہے کہ کلبھوشن یادیو کی اہلیہ نے گذشہ برس بھارت ہی سے پاکستان آ کر اپنے شوہر سے ملاقات کی تھی۔ بھارتی ہٹ دھرمی اب بھی جاری ہے اور وہ ہر محاذ پر پاکستان کی مخالفت کر رہا ہے ۔ بھارت میں ہونے والے آئندہ عام انتخابات بھی پاکستان کی مخالفت کر کے لڑے جا رہے ہیں۔ بھارت ہمیشہ سے کالعدم تنظیم جیش محمد کو بھارت میں رونما ہونے والے دہشت گردی کے واقعات کا ذمہ دار ٹھہراتا آیا ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں پر ہونے والے خود کش حملہ کا ذمہ دار بھی جیش محمد کو ٹھہرا جا رہا ہے مگر آج تک بھارت کسی بھی عالمی فورم پر جیش محمد کے وجود اور پاکستان سے تعلق کو ثابت نہیں کرسکا۔ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی آئندہ عام انتخابات میں اپنی کامیابی کو ممکن بنانے کے لیے پاکستان مخالفت میں اس حد تک آگے بڑھ چکے ہیں کہ اب بھارت اپوزیشن جماعتیں بھی ان کے دعوؤں کو جھوٹ کا پلندہ قرار دے رہی ہیں حتیٰ کہ مودی کی سیاسی جماعت میں بھی اس بات پر تضاد پایا جاتا ہے کہ مودی الیکشن جیتنے کے لیے پاکستان ہی کی مخالفت کرنے پر کیوں تلے ہوئے ہیں۔ بھارت کی تمام سیاسی جماعتوں کا مؤقف ہے کہ انتخابات میں کامیابی ملک اور عوام کی خدمت اور کارکردگی سے حاصل ہوتی ہے صرف اور صرف ہمسایہ ممالک کو ٹارگٹ کر کے کامیابی حاصل کرنا دانشمندی نہیں۔ مقبوضہ کشمیر کے سابق وزیراعلیٰ فاروق عبداللہ نے بھارتی میڈیا کے اس پراپیگنڈہ کو تسلیم کرنے سے صاف انکار کر دیا ہے کہ بھارتی فوجیوں پر ہونے والے حالیہ خود کش حملہ میں پاکستان یا وہاں سے تعلق رکھنے والی کوئی انتہاء پسند جماعت ملوث ہے۔ 

سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے دورہ پاکستان نے بھارت کی راتوں کی نیند اڑا کر رکھ دی ہے اور وہ اس کوشش میں ہیں کہ یہ دورہ کسی بھی صورت میں کامیاب نہ ہو سکے مگر امریکا ، سعودی عرب ، چین ، روس اور افغانستان پہلی مرتبہ امن و امان کے قیام کے لیے پاکستانی کوششوں کی کامیابی کے خواہش مند ہیں ۔ سعودی عرب بھی افغانستان اور پاکستان میں دیرپا امن کے قیام کے لیے انتہائی سنجیدہ نظر آتا ہے ۔ سعودی عرب کی خواہش ہے کہ افغانستان اور پاکستان میں امن و امان قائم ہو اور یہ دونوں ہمسایہ ممالک ترقی اور خوشحالی کے راستے پر گامزن ہونے کے لیے اپنے مقاصد کو حاصل کر لیں۔ ایک افسوسناک پہلو یہ بھی ہے کہ سعودی ولی عہد کے دورہ پاکستان سے پہلے ہی بہت سی شاہراؤں پر سعودی حکمرانوں کے خلاف نفرت انگیز تحریریں لکھی گئی ہیں ان تحریریوں کے ذریعے یہ باور کروانا ہے کہ عرب دنیا پاکستان سے محبت نہیں کرتی اور یہاں کے عوام میں ان کے لیے بے پناہ مخالفت پائی جاتی ہے ۔ پاکستان میں امن و امان کے لیے پاک فوج نے کلیدی کردار ادا کیا ہے ۔ دہشت گردی کے ناسور کو جڑ سے اکھاڑ پھینکا ہے اور اب امریکا کے ساتھ افغان طالبان کے مذاکرات میں بھی مثبت پیشرفت ہو رہی ہے جسے دنیا قدر کی نگاہ سے دیکھ رہی ہے۔ ان حالات میں بھارت کو اپنی روایتی ہٹ دھرمی سے گریز کرتے ہوئے اس حقیقت کو سمجھ لینا چاہیے کہ پاکستان خطہ کا اہم ملک ہے اور آنے والے وقتوں میں اسے دنیا بھر میں مزید اہمیت حاصل ہوتی چلی جائے گی۔ سی پیک اور ون بیلٹ ون روڈ کی تکمیل سے پاکستان دنیا بھر کے لیے اقتصادی راہداری کے طور پر اہمیت اختیار کر جائے گا ۔ بھارت کو بھی اس بات کو سمجھنا ہوگا کہ مسئلہ کشمیر کا حل فوج کے ظالمانہ اور انسانیت سوز سلوک سے نہیں بلکہ مذاکرات سے ممکن ہے۔ آئندہ انتخابات کے نتیجہ میں اقتدار میں آنے والی نئی بھارتی حکومت پر یہ بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ مسئلہ کشمیر کو ترجیحی بنیادوں پر حل کرنے کے لیے پاکستان اور کشمیر کی حریت قیادت سے فیصلہ کن مذاکرات کرے۔

You might also like