Khouj English Advertising Privacy Policy Contact Us
Connect with us

کالم کلوچ

جنت کا دروازہ

Avatar

Published

on

میں سڑک کنارے پیدل چل رہی تھی کہ اچانک میرے کانوں میں ایک صدا گونجی اوئے پترا۔۔۔۔۔ ان الفاظ سے دل میں عجب سا درد محسوس ہوا اور میرے قدم وہیں رک گئے۔ میں نے پیچھے مڑ کر دیکھا تو ایک بوڑھا جس کی جھکی کمر موٹے شیشوں والی عینک کانپتے ہاتھ، صاف ستھرے کپڑے سفید پگڑی سر پر اور وہ زمین پر بیٹھا ہوا تھا۔ جب میں نے دیکھا تو وہ کچھ بول نہیں پا رہا تھا وہ اپنے کانپتے ہاتھ آگے بڑھانے کی کوشش کر رہا تھا لیکن پھر بھی اس کے ہاتھ اٹھ نہیں رہے تھے۔ دیکھنے سے صاف ظاہر تھا کہ بھیک مانگنے میں کتنی شرمندگی ہو رہی ہے اسے۔ مجھ سے رہا نہ گیا تو میں نے اس ضعیف مانس سے پوچھا کہ آپ اچھی نسب کے لگتے ہو تو یہ فقیری کیوں؟ تو اس کی آنکھوں میں اشک بھر آئے۔ عینک کے نیچے سے ہی دونوں ہاتھوں سے وہ اپنے اشک سمیٹنے لگا۔ میں نے بات کو دہراتے ہوئے کہا بتائیں ناں بابا۔ تو اس نے ڈگمگاتی ہوئی آواز سے بتایا۔ آج صبح میں کمرے میں سویا ہوا تھا اچانک میری آنکھ کھلی تو میرے کانوں میں کچھ آوازیں آئی جب میں نے غور کیا تو میرے بچے بحث کر رہے تھے میرا چھوٹا بیٹا جس کے ساتھ میں پچھلے تین سالوں سے رہ رہا تھا وہ اب مجھ سے مخلصی چاہتا ہے جب تک جائیداد میرے نام تھی بہت تابعداری کی میری۔ لیکن اب جب اپنی ساری جمع پونجی میں نے تینوں بیٹوں کو برابر حصوں میں تقسیم کر دی تو میرے چھوٹے صاحبزادے کو اس بات پر اعتراض تھا کہ جب حصہ سب کو برابر ملا تو پھر باپ کی کفالت مجھ اکیلے کے حصے میں کیوں؟ مجھے کس بات کی سزا ہے؟ اور میرے دونوں بڑے بیٹے یہ کہہ رہے تھے کہ ماں باپ چھوٹے کے حصے میں ہی آتے ہیں ہم نے پہلے بہت کیا باپ کیلئے اب تمھاری باری ہے تب میرا چھوٹا بیٹا میری ضروریات زندگی کا حساب کرنے لگا یہاں تک کہ تین وقت کے کھانے کی ضرب تقیسم کرنے لگا۔ اس وقت مجھے ان کا بچپن یاد آ گیا جب میں خود بھوکا رہ کر ان کو تین وقت کا کھانا کھلاتا تھا اپنی خواہشات کو دفن کر کے ان کو اس لائق بنایا کہ وہ اپنی خواہشات پوری کر سکیں۔۔۔ اپنے ہاتھوں کو دیکھتے ہوئے بوڑھا باپ بولا ان ہاتھوں نے ہمیشہ اپنی اولاد کو دیا ہے آج یہی ہاتھ اسی اولاد کے منہ در منہ پھیلاتے ہوئے مجھے لاج آتی ہے۔ میری کل کائنات میری اولاد ہے انھیں لگا کہ ہمارا باپ اونچا سنتا ہے مگر ان کا ایک ایک لفظ میرے کانوں میں گونج رہا تھا اور میں بنا کچھ بولے وہاں سے نکل آیا۔ بھیک مانگتے ہوئے لوگوں کی گالیاں برداشت کر لوں گا مگر اپنے بچوں کی طنزیہ باتیں سننے کی ہمت نہیں مجھ میں ۔
والدین کے دلوں میں اللہ تعالی نے محبت کے ایسے خزانے رکھ دئیے ہیں جو کبھی ختم نہیں ہوتے اولاد فرمابردار ہو یا گستاخ والدین شفقت کی برسات کرتے ہی چلے جاتے ہیں۔ اولاد تو والدین کا حساب آسانی سے کر لیتی ہے لیکن یہ نہیں سوچتے کہ والدین کی محبت اگر دولت کی ہی محتاج ہو تو پھر وہ اپنی جوانی کے بہترین دن رات اپنی اولاد پر خرچ کرنے کی بجائے دنیا کا مال جمع کرنے میں گزارتے۔ بچہ جب اس دنیا میں آتا ہے تو اس کا تن بھی اس کے والدین ڈھانپتے ہیں تب کتنے پیسے دے کر وہ والدین کی محبت خدمت اور پیار خریدتا ہے۔ ماں کے پیروں تلے جنت ہے تو باپ جنت کا دروازہ ۔ باپ کے چہرے کی طرف ایک بار دیکھنا ایک حج جتنا ثواب ہے۔ بدبخت ہیں وہ اولادیں جو جنت کا دروازہ خود اپنے لیے بند کر لیتی ہی

Click to comment

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

کالم کلوچ

سعودی ولی عہد کی آمد اور بھارتی سازشیں

WebDesk 1

Published

on

kamran Goreya

تحریر: کامران گورائیہ

خطے میں امن و امان کی دیرپا قیام کے لیے پاکستان کی کوششوں کے نتیجہ میں جب بھی کوئی مثبت پیشرفت ہونے لگتی ہے تو غیر ملکی طاقتیں مخالفانہ سرگرمیوں کا آغاز کر دیتی ہیں ۔ خاص طور پر بھارت پاکستان میں ہونے والی تمام اہم سرگرمیوں اور پیشرفت کے حوالہ سے پریشانی میں مبتلا ہو کر سازشوں کا سلسلہ شروع کر دیتا ہے۔ سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان ان دنوں تاریخ ساز دورہ پر پاکستان آئے ہوئے ہیں ان کی آمد سے دو روز قبل مقبوضہ کشمیر میں خود کش حملہ بھی بھارت کی رچائی ہوئی ایک ایسی سازش ہے جس کا الزام پاکستان پر لگایا جا رہا ہے ۔پچھلے ایک ماہ کے دوران پاکستان نے امریکا اور افغان طالبان کے درمیان نتیجہ خیز مذاکرات کروانے میں سہولت کار کا کردار ادا کر کے ایسے نتائج دیئے جسے خود امریکا نے بھی حوصلہ افزاء قرار دیا۔ امریکا کے علاوہ بہت سے دیگر عالمی قوتیں اور ممالک افغان طالبان سے امن مذاکرات کو پاکستان کی بڑی سفارتی کامیابی قرار دے رہے ہیں۔ یورپ اور امریکا سمیت عرب دنیا نے بھی امریکا اور افغان طالبان کے درمیان ہونے والے امن مذاکرات کو ناصرف جنوبی ایشیاء بلکہ پوری دنیا میں قیام امن کے لیے خوش آئند قرار دیا۔ بھارت ہمیشہ سے خطہ میں امن و امان کے لیے کئی جانے والی کوششوں کو سبوتاژ کرنے کے لیے سازشوں میں مصروف رہا ہے۔ ممبئی حملے ہوں یا پھر سمجھوتہ ایکسپریس پر دہشت گرد حملہ بھارت نے ہمیشہ پاکستان کو مورد الزام ٹھہرایا ۔ پاکستان اور بھارت کے درمیان ہمیشہ ہی سے مسئلہ کشمیر کو لے کر اختلافات رہے ہیں یہ بھی ایک تلخ حقیقت ہے کہ بھارت میں جب بھی انتخابات کا وقت قریب آتا ہے تو وہاں کی سیاسی جماعتیں پاکستان مخالفت کو سلوگن بنا کر انتخابی میدان میں اترتی ہیں ۔ مودی سرکار بھی ایک بار پھر بھارت میں ہونے والے عام انتخابات میں پاکستان کو ملوث کرنے کا حربہ استعمال کر رہی ہے کبھی اسٹرٹیجک سرجیکل سٹرائیک ہو یا پھر ایل او سی پر ہونے والی اشتعال انگیزیاں بھارت نے ہمیشہ پاکستان کو امن تباہ کرنے کا ذمہ دار قرار دیا ہے اور دنیا کو باور کروانے کی کوشش کی کہ پاکستان خطے میں امن و امان کے قیام میں سنجیدہ نہیں ہے بلکہ وہ دہشت گردی کے واقعات میں ملوث ہے جس کا نوٹس لیا جانا چاہیے مگر اقوام متحدہ ، امریکا اور یورپ یا پھر عالمی سطح پر انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والی تنظیمیں سبھی اس حقیقت سے بخوبی آگاہ ہیں کہ بھارت کھلے عام مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کو پامال کرنے اور نہتے کشمیریوں پر بربریت اور ظلم و ستم کے پہاڑ توڑنے سے باز نہیں آ رہا ۔ یہی نہیں بلکہ بھارت کی ہٹ دھرمی اس حد تک بڑھ چکی ہے کہ وہ اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کے عالمی مبصرین کو مقبوضہ وادی کا دورہ کرنے کی اجازت نہیں دیتا اس کے برعکس پاکستان نے ہمیشہ غیر ملکی مبصرین کو آزاد کشمیر سمیت ملک بھر کے دورے کرنے کی دعوت مسلسل دیتا آیا ہے۔ پاکستان اس بات کی اہمیت کو بخوبی سمجھتا ہے کہ افغانستان میں امن کا قیام خطے کے وسیع تر مفاد میں ہے ۔ پاکستان اور افغانستان کا امن ناصرف جنوبی ایشیاء بلکہ دنیا بھر میں امن و امان سے وابستہ ہے، بھارتی ہٹ دھرمی ہمیشہ ہی سے خطے میں امن و امان کے قیام میں رکاوٹ رہی ہے۔ 

2015ء میں چینی صدر کے دورہ پاکستان کے نتیجہ میں سی پیک اور ون بیلٹ ون روڈ منصوبہ کے آغاز پر بھی بھارت کے پیٹ میں درد ہونے لگ گئی تھی اور اس نے پاکستان کی مخالفت میں سازشوں کا آغاز کر دیا تھا ۔ بھارت افغانستان میں اپنا اثرورسوخ بڑھا چکا ہے کہ وہاں پر بیٹھ کر پاکستان میں دہشت گردی پھیلا رہا ہے ۔ پاکستانی حدود میں دہشت گردی کے جتنے بھی واقعات رونما ہوئے ان میں بھارت کی خفیہ ایجنسیوں کے ملوث ہونے کے ٹھوس شواہد موجود ہیں جنہیں پاکستان تمام عالمی فورمز پر پیش کر چکا ہے۔ بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو بھی پاکستان میں دہشت گرد کارروائیوں میں ملوث ہونے کا اعتراف کر چکا ہے مگر بھارت اسے اپنا شہری تسلیم کرنے سے مسلسل انکار کر رہا ہے جبکہ یہ بات بھی ریکارڈ میں موجود ہے کہ کلبھوشن یادیو کی اہلیہ نے گذشہ برس بھارت ہی سے پاکستان آ کر اپنے شوہر سے ملاقات کی تھی۔ بھارتی ہٹ دھرمی اب بھی جاری ہے اور وہ ہر محاذ پر پاکستان کی مخالفت کر رہا ہے ۔ بھارت میں ہونے والے آئندہ عام انتخابات بھی پاکستان کی مخالفت کر کے لڑے جا رہے ہیں۔ بھارت ہمیشہ سے کالعدم تنظیم جیش محمد کو بھارت میں رونما ہونے والے دہشت گردی کے واقعات کا ذمہ دار ٹھہراتا آیا ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں پر ہونے والے خود کش حملہ کا ذمہ دار بھی جیش محمد کو ٹھہرا جا رہا ہے مگر آج تک بھارت کسی بھی عالمی فورم پر جیش محمد کے وجود اور پاکستان سے تعلق کو ثابت نہیں کرسکا۔ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی آئندہ عام انتخابات میں اپنی کامیابی کو ممکن بنانے کے لیے پاکستان مخالفت میں اس حد تک آگے بڑھ چکے ہیں کہ اب بھارت اپوزیشن جماعتیں بھی ان کے دعوؤں کو جھوٹ کا پلندہ قرار دے رہی ہیں حتیٰ کہ مودی کی سیاسی جماعت میں بھی اس بات پر تضاد پایا جاتا ہے کہ مودی الیکشن جیتنے کے لیے پاکستان ہی کی مخالفت کرنے پر کیوں تلے ہوئے ہیں۔ بھارت کی تمام سیاسی جماعتوں کا مؤقف ہے کہ انتخابات میں کامیابی ملک اور عوام کی خدمت اور کارکردگی سے حاصل ہوتی ہے صرف اور صرف ہمسایہ ممالک کو ٹارگٹ کر کے کامیابی حاصل کرنا دانشمندی نہیں۔ مقبوضہ کشمیر کے سابق وزیراعلیٰ فاروق عبداللہ نے بھارتی میڈیا کے اس پراپیگنڈہ کو تسلیم کرنے سے صاف انکار کر دیا ہے کہ بھارتی فوجیوں پر ہونے والے حالیہ خود کش حملہ میں پاکستان یا وہاں سے تعلق رکھنے والی کوئی انتہاء پسند جماعت ملوث ہے۔ 

سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے دورہ پاکستان نے بھارت کی راتوں کی نیند اڑا کر رکھ دی ہے اور وہ اس کوشش میں ہیں کہ یہ دورہ کسی بھی صورت میں کامیاب نہ ہو سکے مگر امریکا ، سعودی عرب ، چین ، روس اور افغانستان پہلی مرتبہ امن و امان کے قیام کے لیے پاکستانی کوششوں کی کامیابی کے خواہش مند ہیں ۔ سعودی عرب بھی افغانستان اور پاکستان میں دیرپا امن کے قیام کے لیے انتہائی سنجیدہ نظر آتا ہے ۔ سعودی عرب کی خواہش ہے کہ افغانستان اور پاکستان میں امن و امان قائم ہو اور یہ دونوں ہمسایہ ممالک ترقی اور خوشحالی کے راستے پر گامزن ہونے کے لیے اپنے مقاصد کو حاصل کر لیں۔ ایک افسوسناک پہلو یہ بھی ہے کہ سعودی ولی عہد کے دورہ پاکستان سے پہلے ہی بہت سی شاہراؤں پر سعودی حکمرانوں کے خلاف نفرت انگیز تحریریں لکھی گئی ہیں ان تحریریوں کے ذریعے یہ باور کروانا ہے کہ عرب دنیا پاکستان سے محبت نہیں کرتی اور یہاں کے عوام میں ان کے لیے بے پناہ مخالفت پائی جاتی ہے ۔ پاکستان میں امن و امان کے لیے پاک فوج نے کلیدی کردار ادا کیا ہے ۔ دہشت گردی کے ناسور کو جڑ سے اکھاڑ پھینکا ہے اور اب امریکا کے ساتھ افغان طالبان کے مذاکرات میں بھی مثبت پیشرفت ہو رہی ہے جسے دنیا قدر کی نگاہ سے دیکھ رہی ہے۔ ان حالات میں بھارت کو اپنی روایتی ہٹ دھرمی سے گریز کرتے ہوئے اس حقیقت کو سمجھ لینا چاہیے کہ پاکستان خطہ کا اہم ملک ہے اور آنے والے وقتوں میں اسے دنیا بھر میں مزید اہمیت حاصل ہوتی چلی جائے گی۔ سی پیک اور ون بیلٹ ون روڈ کی تکمیل سے پاکستان دنیا بھر کے لیے اقتصادی راہداری کے طور پر اہمیت اختیار کر جائے گا ۔ بھارت کو بھی اس بات کو سمجھنا ہوگا کہ مسئلہ کشمیر کا حل فوج کے ظالمانہ اور انسانیت سوز سلوک سے نہیں بلکہ مذاکرات سے ممکن ہے۔ آئندہ انتخابات کے نتیجہ میں اقتدار میں آنے والی نئی بھارتی حکومت پر یہ بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ مسئلہ کشمیر کو ترجیحی بنیادوں پر حل کرنے کے لیے پاکستان اور کشمیر کی حریت قیادت سے فیصلہ کن مذاکرات کرے۔

Continue Reading

کالم کلوچ

شہباز کی پرواز

WebDesk 1

Published

on

kamran Goreya

تحریر: کامران گورائیہ
قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر اور مسلم لیگ ن کے صدر میاں شہباز شریف کو چیئرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے عہدہ سے ہٹانے کی بھرپور تیاریاں کی جا رہی ہیں ۔ حکومتی حلقوں میں زبان زد عام ہے کہ میاں شہباز شریف کو پی اے سی کا چیئرمین بنانا بڑی غلطی تھی اور اس غلطی کو اسی صورت میں سدھارا جا سکتا ہے کہ ان سے یہ عہدہ چھین لیا جائے۔ تمام اپوزیشن جماعتیں اس بات سے اتفاق کرتے ہوئے دکھائی دیتی ہیں کہ بطور چیئرمین پی اے سی شہباز شریف کی پرواز افق پر درست سمت کی طرف جا رہی ہے اور حکومت شہباز شریف سے خوفزدہ نظر آ رہی ہے۔ وزیراعظم عمران خان کو ان کے پارٹی رہنماؤں نے آگاہ کیا ہے کہ میاں شہباز شریف کو پی اے سی کی چیئرمینی سے کیسے ہٹایا جا سکتا ہے۔ وزیراعظم کو یہ بھی بتایا گیا ہے کہ مہمند اور بھاشا میر ڈیم کی تعمیر کا ٹھیکہ ڈیسکون کمپنی کو دینے کے معاملے پر حکومت پہلے ہی سے شدید تنقید کا شکار ہے جبکہ عمران خان کو یہ اشارے بھی ملے ہیں کہ میاں شہباز شریف کے معاملات کہیں اور بھی طے ہونے جا رہے ہیں اس صورت حال کے پیش نظر جتنی جلد ممکن ہو انہیں چیئرمین پی اے سی کے عہدہ سے فارغ کرنا وقت اور حالات کا تقاضا ہے ۔ وزیراعظم عمران خان نے میاں شہباز شریف کو چیئرمین پی اے سی کے عہدہ پر اس مقصد سے قبول کیا تھا کہ قانون سازی کے عمل میں اپوزیشن جماعتوں کی نمائندگی لازم ہے اور حکومت کے لیے قومی امور اور پارلیمنٹ کو چلانا مشکل ہو رہا تھا۔ اس سلسلہ میں سب سے پہلے عمران خان کے اتحادی اور وفاقی وزیر برائے ریلوے شیخ رشید نے شہباز شریف کی مخالفت کرنا شروع کی تھی انہوں نے اس معاملہ کو عدالت میں لیجانے کا بھی فیصلہ کیا تھا مگر حکومت کی بے یقینی اور ملک کو درپیش بدترین معاشی بدحالی کی وجہ سے کوئی نتیجہ فوری طور پر نکلتا ہوا نظر نہیں آ رہا ۔ عمران خان پچھلے کئی روز سے اپنے بیانات میں جارحانہ انداز اپنائے ہوئے ہیں وہ خواہش رکھتے ہیں کہ پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری اور مسلم لیگ ن کے قائد میاں نواز شریف کو سیاست سے بالکل آؤٹ کر دیا جائے مگر فیصلہ ساز اس فارمولے کو مسترد کر چکے ہیں ۔ عمران خان کے اپوزیشن مخالف بیانات اور لہجے کی تلخی اس بات کا اشارہ بھی دے رہی ہے کہ اب حالات ان کے ہاتھ میں نہیں ہیں وہ بے بسی کی کیفیت سے دو چار ہیں ۔ عمران خان کے بیانات کی تلخی اس بات کا واضح ثبوت ہے کہ انہیں کھل کر کھیلنے کا موقع نہیں مل رہا۔ 
وزیراعظم عمران خان کو ترجیحی بنیادوں پر جن مسائل کو حل کرنا ہے ان میں ملک کی معاشی ابتری ، مہنگائی پر کنٹرول، ڈالر، بجلی اور گیس کی اونچی اڑان کو قابو میں رکھنا شامل ہے۔ اس مقصد کے لیے انہوں نے سعودی عرب، ترکی ، ملائیشیا، قطر اور چین کے دورے بھی کیے جو زیادہ کامیاب نہیں قرار دیئے جا سکتے۔ آئی ایم ایف سے عمران خان کے مذاکرات کامیاب تو ہو چکے ہیں مگر اس کے لیے انہیں عوام پر کھربوں روپے مالیت کے نئے ٹیکسز عائد کرنے کا چیلنج درپیش ہے ۔ اپنی سیاسی جماعت کی ساکھ کو بھی بچانہ عمران خان کے لیے درد سر بن چکا ہے۔ عمران خان دو ٹوک فیصلے کرنے کے قائل رہے ہیں مگر انہیں اپنی اتحادی جماعتوں کے تحفظات دور کرنے کا مسئلہ بھی درپیش ہے۔ اس سلسلہ میں بلوچستان سے اختر مینگل گروپ ، سندھ سے ایم کیو ایم اور فنگشنل لیگ جبکہ پنجاب سے ق لیگ کو بھی مطمئن رکھنا مشکل دکھائی دے رہا ہے۔ حکومت پر عمران خان کی گرفت دن بدن کمزور ہوتی چلی جا رہی ہے اسی وجہ سے وہ قبل از وقت انتخابات کے خواہشمند بھی ہیں۔ عمران خان کا خیال ہے کہ پچھلے 6 ماہ کے دوران ان کی حکومت نے عوام کی امنگوں کے مطابق احتساب کے عمل کو آگے بڑھا کر پہلے سے زیادہ مقبولیت حاصل کر لی ہے مگر حقائق یہ ہیں کہ عمران خان کی حکومت اگر کسی وجہ سے ختم ہو جاتی ہے تو پھر تحریک انصاف کی حیثیت ق لیگ جیسی ہو جائے گی جو پرویز مشرف کے اقتدار کا خاتمہ ہوتے ہی بے وقعت اور غیر مقبول ہوگی تھی۔ اس حقیقت کا ادراک تمام سنجیدہ سیاسی حلقوں کو بھی ہے۔ اس بات کو سمجھنا بھی ضروری ہے کہ اب ملک کی 2 بڑی سیاسی جماعتیں مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی عمران خان کو سلیکٹڈوزیراعظم قرار دے چکی ہیں۔ 
اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف بھی دور اندیشی کا مظاہرہ کر رہے ہیں وہ ایسے کسی اقدام کی حمایت نہیں کر رہے جس سے حکومت کو کمزور کرنے کی کوششیں قرار دیا جاسکتا ہو۔ میاں شہباز شریف نے حکومت کی مخالفت میں کسی تحریک کا اعلان کیا نہ ہی ایسی کسی پیشکش کی حوصلہ افزائی کی۔ قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر اور مسلم لیگ ن کے صدر میاں شہباز شریف نے اپنی جماعت کے سینئر سیاسی رہنماؤں کو اعتماد میں لیتے ہوئے بتایا ہے کہ وہ مکمل طور پر غیر جانبدار رہیں گے حکومت پر تنقید کی جائے گی مگر حکومت گرانے کے لیے کوئی قدم نہیں اٹھایا جائے گا۔ شہباز شریف نے اپنی جماعت کے رہنماؤں کو یہ بھی بتایا ہے کہ بہت جلد انہیں ہائی کورٹ سے ضمانت پر رہا ئی مل جائے گی اور وہ بہت جلد عوام کے درمیان ہوں گے۔ انہوں نے پارٹی رہنماؤں کو آگاہ کیا کہ معاملات تیزی سے بہتری کی جانب بڑھ رہے ہیں بہت جلد اچھا وقت آنے والا ہے ۔ شہباز شریف نے ملک بھر میں مسلم لیگ ن کی تنظیم نو کی ہدایات بھی جاری کر دی ہیں ۔ اس بات کے بھی قوی امکانات ہیں کہ پارٹی قائد میاں نوازشریف بھی بہت جلد ضمانت پر رہا ہو کر عوام کے درمیان ہوں گے۔ اپنی گرفتاری سے قبل میاں نواز شریف نے ن لیگی رہنماؤں کو عوامی رابطہ مہم شروع کرنے کی ہدایت بھی کی تھی جس پر عملدرآمد شروع ہو چکا ہے۔ ملک کی مجموعی سیاسی صورتحال کو سامنے رکھتے ہوئے یہ انداز لگانا مشکل نہیں کہ مسلم لیگ ن پاکستان کی سب سے بڑی سیاسی قوت ہے ۔ ن لیگ کا مستقبل عوام کی خوشحالی سے وابستہ ہے۔ مسلم لیگ ن کے سابقہ دور حکومت میں ملکی معیشت بہترین ڈگر پر چل نکلی تھی جسے غیر مستحکم کرنے کے لیے پہلے میاں نواز شریف کو نا اہل کروایا گیا بعد ازاں انہیں پارٹی صدارت کے حق سے بھی محروم کر دیا گیا تھا مگر میاں نواز شریف نے اپنی نا اہلی اور پارٹی صدارت کے عہدہ سے فراغت کے بعد بھی حوصلہ مندی کا ثبوت دیا وہ خندہ پیشانی سے عدالتی فیصلوں کو قبول کرتے ہوئے جیل میں قید کی سزا بھگت رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ان کی قربانی ملک کے شاندار مستقبل کے لیے رائیگاں نہیں جائے گی۔ بہت جلد حالات قابو میں آ جائیں گے اور مستقبل قریب میں ہی وہ پاکستانی سیاست میں ایک بار پھر پہلے سے بھی کہیں زیادہ طاقت کے ساتھ اقتدار کے ایوانوں میں پہنچیں گے ۔ مسلم لیگ ن کے تمام سینئر رہنماء یہ بات زور دے کر کہتے ہیں کہ میاں نواز شریف وزیراعظم ہاؤس میں رہنے سے کہیں زیادہ جیل میں خطرناک ثابت ہوں گے ۔ میاں شہباز شریف اپنی پارٹی قائد کا صدق دل سے احترام کرتے ہیں اوران کے فیصلوں پر عمل کرتے ہیں ۔ میاں شہباز شریف کی پرواز کہاں تک ہوگی اس کا فیصلہ اگلے 2 ماہ میں ہوتا نظر آ رہا ہے۔ امید کی کرنیں مسلم لیگ ن کے لیے نمودار ہوتی چلی جا رہی ہیں بہت سی دیگر سیاسی جماعتیں بھی مارچ کو ملک کی سیاست میں ہلچل کا مہینہ قرار دے رہی ہیں۔

Continue Reading

کالم کلوچ

سابق وزیراعظم سے ملاقات

WebDesk 1

Published

on

kamran Goreya

تحریر: کامران گورائیہ 

میں اپنے بڑے بھائی سیکرٹری اطلاعات لاہور عمران گورائیہ اور ایڈیشنل سیکرٹری لاہور توصیف احمد شاہ کے ہمراہ جب سابق وزیراعظم میاں نواز شریف سے ملاقات کے لیے کوٹ لکھپت جیل پہنچا تو انہیں ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ جیل کے کمرے میں ایک عام سی پرانی کرسی پر بیٹھے ہوئے دیکھا۔ ان سے ملاقات کے لیے آنے والے 20 سے 25 افراد بھی اس وقت کمرے میں موجود تھے جن سے وہ گفتگو کر رہے تھے ۔ سابق وزیراعظم میاں نواز شریف ملاقات کے لیے آنے والوں سے کھڑے ہو کر ملتے اور مصافحہ کرتے، ملاقات کے لیے آنے والے ان لوگوں سے جن سے ان کی پرانی آشنائی تھی ان سے ان کے اہلخانہ کی خیریت دریافت کرتے اور ان کے ساتھ گزارے ہوئے دنوں کی یادیں تازہ کرتے رہے۔ میں نے یہ بھی دیکھا کہ ان کے صحت بہتر نہیں تھی ان کا چہرہ ہشاش بشاش نہیں تھا ان کے ہاتھ بھی کپکپا رہے تھے ، چہرے پر روایتی تازگی بھی موجود نہیں تھی لیکن گفتگو کرنے میں ہمیشہ کی طرح ٹھہراؤ موجود تھا۔ وہ مکمل طور پر صحت مند نہیں ہیں اس کا ادراک انہیں خود بھی تھا۔ ملاقات کے لیے آنے والوں سے سیاست اور ملکی امور پر بھی گفتگو کر رہے تھے ۔ 

ہم جب ان سے ملے تو انہوں نے مصافحہ کرنے کے ساتھ ساتھ عمران گورائیہ اور توصیف احمد شاہ کو لاہور میں پارٹی کی از سر نو تنظیم سازی کرنے کی ہدایت بھی کی۔ سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کو جیل میں ہونے کے باوجود عمران خان حکومت کی کارکردگی اور کارگزاری سے مکمل طور پر آگاہی حاصل تھی اسی لیے انہوں نے کہا کہ ہمارے دورے حکومت میں شروع کیے گئے منصوبے مکمل ہو چکے ہیں یا مکمل ہو نے والے ہیں ۔ لاہور سے خانیوال اور خانیوال سے رحیم یار خان موٹر وے منصوبے بھی مکمل ہو چکے ہیں مگر موجودہ حکومت ان کا افتتاح نہیں کر رہی۔ ایسا نہ کرنے سے عوام کی سہولت کے لیے بنائی گئی موٹروے کو استعمال نہیں کیا جا رہا۔ میاں نواز شریف نے یہ بھی کہا کہ عمران خان نے اپوزیشن میں ہوتے ہوئے ایل این جی اور سی این جی کے جن منصوبوں کو ملک کے نقصان کا سودا قرار دیا تھا آج وہ خود اس کی پہرے داری کر رہے ہیں۔ سی پیک پر تنقید کرنے والے اور اس منصوبہ کو بیکار کہنے والوں کی زبان کے یہ الفاظ ہیں کہ سی پیک ایک عظیم الشان منصوبہ ہے اور ملک کی ترقی کے لیے اس منصوبہ کی تکمیل انتہائی ضروری ہے ۔ میاں نواز شریف سے ملاقات کے لیے آنے والے ایک سابق کونسلر جنرل نے انہیں بتایا کہ عمران خان خود قبل از وقت الیکشن کروانے کے بارے میں سوچ رہے ہیں جس پر سابق وزیراعظم نے کہا کہ عمران خان الیکشن کروانے والے کون ہوتے ہیں ان کے پاس تو ایسا کوئی اختیار ہی نہیں ہے وہ ایک کٹھ پتلی وزیراعظم کی طرح ہیں جو صرف اشاروں اور ڈوروں پر ناچتے اور حرکت کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ خدا کا کام ہے کہ جب اسے منظور ہوگا الیکشن ہو جائیں گے ۔ ان کی گفتگو سے صاف ظاہر ہو رہا تھا کہ وہ جانتے ہیں کہ وقت اور حالات میں موجودہ حکومت اپنی آئینی مدت پوری نہیں کر پائے گی اور ملک میں جلد انتخابات ہوں گے۔ 

سابق وزیراعظم میاں نواز شریف سے ملاقاتیں کرنے والوں کے لیے 20سے 25 منٹ تک کا وقت مقرر تھا جس کے بعد اگلے ملاقاتی کمرے میں بھیج دیئے جاتے ۔ اراکین اسمبلی اور ن لیگی کارکنان بڑی تعداد میں میاں نواز شریف سے ملاقات کے لیے کھڑے تھے ۔ ان سے ملاقات کے لیے آنے والے تمام لوگوں نے اس عزم کا ارادہ ظاہر کیا کہ وہ ہمیشہ کی طرح اپنے قائد کے ساتھ کھڑے ہیں انہوں نے ہر طرح کے مشکل حالات کا مقابلہ کرنے کی یقین دہانی بھی کروائی۔ میں نے سابق وزیراعظم میاں نوازشریف سے سوال کیا کہ میاں صاحب ! آپ کی جیل میں موجودگی کی وجہ سی پیک منصوبہ ہے جس پر وہ خاموش رہے۔ میں نے دوسرا سوال کرتے ہوئے ان سے پوچھا کہ چائینہ کے پاکستان میں موجود سفیر حکومتی پالیسیوں پر شدید تحفظات کا اظہار کر رہے ہیں اور چین کی حکومت پاکستان سے بری طرح ناراض ہے اس پر آپ کا کیا مؤقف ہے، وہ پھر خاموش رہے ۔میں نے پھر پوچھا کہ آپ کی حکومت ایک عالمی سازش کے تحت ختم کروائی گئی اور آپ کو وزارت عظمیٰ کے منصب سے ہٹایا جانا بھی اسی سازش کا حصہ تھا جس پر انہوں نے کہا کہ اللہ اپنے بندوں کو آزمائش میں ڈال کر آزماتا ہے اور وہی ان مشکلات اور پریشانیوں کو ٹالنے والا ہے۔ میاں نواز شریف نے کہا کہ میرا اس بات پر پختہ یقین ہے کہ پاکستان کا مستقبل تابناک ہے اور اس ملک کو آگے بڑھنے اور ترقی کرنے سے کوئی طاقت نہیں روک سکتی۔ ملاقات کے آخری لمحات میں میاں نواز شریف سے اپنے کارکنوں اور اراکین پارلیمنٹ سے کہا کہ میری فکر بالکل نہ کیا کریں بلکہ ملک کے بارے میں سوچیں اور ملک کی بہتری کے لیے اقدامات اور فکر کریں۔ 

ان سے ملاقات کی خاص بات یہ تھی جس کا مجھے تاثر ملا اور اس کی میں نشاندہی کرنا چاہوں گا کہ میاں نواز شریف بخوبی آگاہ ہیں کہ وزیراعظم عمران خان اپنے بوجھ تلے دبتے چلے جا رہے ہیں، وہ یہ بھی جانتے تھے کہ عمران خان کی حکومت اپنی مدت پوری نہیں کر پائے گی اور الیکشن وقت سے بہت پہلے ہو جائیں گے۔ ایک اور خاص بات جو میں نے میاں نواز شریف کے رویہ اور گفتگو سے محسوس کی کہ وہ بھرپور طور پر حوصلہ مندی سے جیل کی سزا کاٹ رہے تھے انہیں اپنے مستقبل کی فکر نہیں تھی بلکہ وہ ملکی حالات اور سیاسی امور پر دلائل اور مکمل فہم و فراست کے ساتھ گفتگو کر رہے تھے۔ 

سابق وزیراعظم میاں نواز شریف سے ملاقات کے بعد مجھے اس بات کا بھی پختہ یقین ہو گیا کہ انہیں اپنے ساتھ ہونے والے سلوک کے بارے میں پہلے سے علم تھا اور وہ جانتے تھے کہ ان کے ساتھ کیا ہونے والا ہے اور وہ آنے والے حالات کے لیے تیار بھی تھے مگر وہ اپنی اسیری کی قربانی کو پاکستان اور عوام کے لیے ایک نئی امید بنتے دیکھنے کے خواہشمندبھی ہیں۔ اس حقیقت سے انکار کسی صورت ممکن نہیں کہ پاکستان نے چین کے ساتھ مل کر سی پیک اور ون بیلٹ ون روڈ جیسا منصوبہ جس دن سے شروع کیا یہ منصوبہ امریکہ اور بھارت کو روز اوّل سے ہی کھٹکنے لگا اور ان ممالک نے اس منصوبہ کو سبوتاژ کرنے کے لیے سازشیں گھڑنا شروع کر دیں۔ میاں نواز شریف نے جب سابق امریکی صدر بل کلنٹن کے اربوں روپے کی پیشکش کو ٹھکراتے ہوئے ایٹمی دھماکے کیے تھے تب بھی ان کی حکومت چھین لی گئی تھی اور ملک میں مارشل لاء نافذ ہو گیا تھا اس بار بھی وہ جیل میں صرف اور صرف سی پیک اور ون بیلٹ ون روڈ منصوبہ کی وجہ سے سزا بھگت رہے ہیں۔ میری خواہش ہے کہ ہمارے سیاستدان ملکی مفادات کو پیش نظر رکھتے ہوئے باشعور ہونے کا ثبوت دیں اور ملک کی ترقی اور خوشحالی کے لیے اپنا اپنا کردار دیانت داری اور ذمہ داری کے ساتھ انجام دیں کیونکہ یہ ملک ہے تو وہ ہیں عوام ہیں اور سیاست کی دنیا ہے جس میں رہتے ہوئے آگے بڑھتے رہنا اور ترقی کے عمل میں ایک دوسرے سے بڑھ چڑھ کر کردار ادا کرنا وقت اور حالات کی ضرورت ہے۔

Continue Reading
Correspondent Required at Khouj News
Advertisement
tererist
پاکستان5 گھنٹے ago

دہشتگرد سوشل میڈیا کا استعمال کرنے لگے

fishers1
پاکستان6 گھنٹے ago

پاکستان نے مزید 100 بھارتی ماہی گیررہا کردیئے

imran khan
پاکستان7 گھنٹے ago

عمران خان انتہائی قدم اُٹھانے کو تیار،سنسنی خیزانکشاف

ayub khan
پاکستان7 گھنٹے ago

ایوب خان کی واپسی ،منصوبہ مکمل،تہلکہ خیز خبرمنظرعام پر

rain
پاکستان7 گھنٹے ago

ملک کے بیشتر علاقوں میں بارش کی پیشگوئی

nadeem bhutoo
پاکستان7 گھنٹے ago

جعلی اکاؤنٹس کیس میں بھٹو ہاؤس کا سپروائزرگرفتار

mola bux chandeo
پاکستان8 گھنٹے ago

خان صاحب کی کشتی میں سوراخ ہوچکا

benazir card
پاکستان8 گھنٹے ago

بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام میں لوٹ مار کرنیوالا سرغنہ گرفتار

hoobs and shaw
ویڈیو8 گھنٹے ago

فلم ہابس اینڈ شا کا نیا ٹریلرجاری

arbaz,arora1
شوبز8 گھنٹے ago

ارباز خان نے ملائیکا سے علیحدگی کی وجہ بتادی

numan langryaal
پاکستان8 گھنٹے ago

وزیر زراعت نے بہنوئی کوچیرمین ایگریکلچرل لگوادیا

attack lanka
پاکستان8 گھنٹے ago

سری لنکا دھماکوں میں 3 پاکستانی خواتین بھی زخمی

maryam aurangzeb
پاکستان8 گھنٹے ago

حکومت اس قابل ہی نہیں کہ اسے گرایا جائے

pm in iran
پاکستان8 گھنٹے ago

وزیراعظم دو روزہ دورے پرایران پہنچ گئے

attack sirilanka
انٹرنیشنل8 گھنٹے ago

سری لنکا:ہلاکتوں کی تعداد 207 تک پہنچ گئی

imran khan
پاکستان7 گھنٹے ago

عمران خان انتہائی قدم اُٹھانے کو تیار،سنسنی خیزانکشاف

arbaz,arora1
شوبز8 گھنٹے ago

ارباز خان نے ملائیکا سے علیحدگی کی وجہ بتادی

imran khan
پاکستان14 گھنٹے ago

وزیراعظم آج منصوبے کا سنگ بنیاد رکھیں گے

numan langryaal
پاکستان8 گھنٹے ago

وزیر زراعت نے بہنوئی کوچیرمین ایگریکلچرل لگوادیا

features
ٹیکنا لوجی12 گھنٹے ago

اسکرین شارٹ بند، فنگرپرنٹس کے بغیر رسائی ناممکن

amir kiyani
پاکستان12 گھنٹے ago

عامرکیانی نے وزارت سے ہٹائے جانے پر خاموشی توڑدی

mashal malik
پاکستان13 گھنٹے ago

مشعال کا بھارت میں قید شوہرکے پاس جانے کا اعلان

ch nisar
پاکستان13 گھنٹے ago

چوہدری نثاروزارت اعلیٰ کے مضبوط امیدوار

yaseen malik
انٹرنیشنل14 گھنٹے ago

یاسین ملک کی حالت تشویشناک، اسپتال داخل

asad,treen
پاکستان13 گھنٹے ago

جہانگیرترین اسدعمرکے دفاع میں سامنے آگئے

nab logo
پاکستان9 گھنٹے ago

نیب کا وزیراعظم کے مشیر کے خلاف تحقیقات کا آغاز

shadab khan
کھیل14 گھنٹے ago

شاداب خان کے بلڈ ٹیسٹ کی رپورٹ درست نہیں

ayub khan
پاکستان7 گھنٹے ago

ایوب خان کی واپسی ،منصوبہ مکمل،تہلکہ خیز خبرمنظرعام پر

amir,croford
کھیل13 گھنٹے ago

امریکی باکسرنےعامرخان کے خلاف فائٹ جیت لی

home accident
پاکستان13 گھنٹے ago

3 منزلہ عمارت زمین بوس، خواتین سمیت 6 جاں بحق

hoobs and shaw
ویڈیو8 گھنٹے ago

فلم ہابس اینڈ شا کا نیا ٹریلرجاری

burh khalifa
ویڈیو1 دن ago

برج الخلیفہ پرشاندارمیوزیکل فاؤنٹین شو

lucy iin the sky
ویڈیو1 دن ago

فلم ’لوسی ان دی اسکائی‘کا نیا ٹریلرجاری

ویڈیو2 دن ago

تھرلر فلم "چائلڈز پلے”کا نیا ٹریلر جاری

ویڈیو3 دن ago

ڈرامہ فلم "وی ہیو آلویز لیوڈ ان دی کاسل "کاپہلا ٹریلر جاری

x man dark
ویڈیو3 دن ago

فلم ’ایکس مین ۔ ڈارک فینکس‘ کا نیا ٹریلر جاری

dog tools
ٹیکنا لوجی4 دن ago

روبوٹ کتوں کا بڑے ٹرک کوکھینچنے کا مظاہرہ

toy story 4
ویڈیو4 دن ago

فلم "ٹوائے اسٹوری 4 "کی نئی جھلکیاں

ویڈیو5 دن ago

ہالی ووڈ فلم” دی پرفیکشن” کاپہلا ٹریلر جاری

mahira khan
شوبز5 دن ago

’پرے ہٹ‘ کہنے کی ماہرہ خان کی ویڈیو وائرل

g o t 4
شوبز5 دن ago

’گیم آف تھرونز‘ کے آخری سیزن کی قسط کا ریکارڈ

avengers
ویڈیو5 دن ago

ایکشن فلم”ایونجرز: اینڈ گیم” کی نئی جھلکیاں

ویڈیو6 دن ago

پاکستان سے متاثر ہو کر بنائی جانے والی بالی وڈ فلم

ویڈیو6 دن ago

برج خلیفہ سے متعلق حیران کن ویڈیو منظرعام پر

ویڈیو1 ہفتہ ago

ایکشن تھرلر فلم”جان وِک چیپٹر3 "کی نئی جھلکیاں جاری

مقبول خبریں