Connect with us

شوبز

سیاسی میدان میں ناکام

Published

on

سیاسی میدان میں ناکام

انتخابات 2018 میں سیاسی قائدین کے علاوہ شوبز انڈسٹری سے تعلق رکھنےوالے فنکاروں نے بھی بڑھ چڑھ کر حصہ لیاتھا تاہم یہ فنکار انتخابات نہ جیت سکے اور سیاسی بساط پر ناکام رہے -گلوکارابرارالحق پاکستان تحریک انصاف کے پلیٹ فارم سے نارووال کے حلقے این اے78سے انتخابی میدان میں اترے تھے۔ یہ حلقہ پاکستان مسلم لیگ(ن)کے رہنما اورسابق وزیر داخلہ احسن اقبال کا حلقہ ہے اور وہ بھی اسی حلقے سے کھڑے ہوئے۔ گزشتہ انتخابات کے مقابلے میں اس بار احسن اقبال اور ابرارالحق کے درمیان کانٹے کا مقابلہ متوقع تھا تاہم احسن اقبال نے اپنےآبائی حلقے سےایک لاکھ 59 ہزار 6سو51 ووٹ لے کر ابرارالحق کو شکست دےدی، جب کہ ابرارالحق 88ہزار250 ووٹ لے سکے۔
گلوکار جواد احمد نے انتخابات 2018 میں کسی اورجماعت میں شمولیت کے بجائے اپنی پارٹی بنانے کو ترجیح دی اور ’’برابری پارٹی‘‘کے نام سے اپنی سیاسی جماعت بنائی۔ جواد احمد ایک حلقے سے نہیں بلکہ سیاست کی دنیا کے بادشاہوں کے مقابل تین حلقوں سے انتخابی میدان میں اترے تھے۔کراچی کا حلقہ این اے246 پاکستان پیپلز پارٹی کا گڑھ سمجھاجاتا ہے اور اس حلقے سے اس بار پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کھڑے ہوئے تھےدلچسپ بات یہ ہے اس حلقے سے نہ تو جواد احمد جیتے اور نہ ہی بلاول بھٹو۔ بلکہ این اے 246 سے پاکستان تحریک انصاف کے امیدوارعبدالشکور شاد 52 ہزار750 ووٹ لے کرکامیاب رہے-گلوکار جواد احمد کامقابلہ لاہور کے حلقےاین اے 132 سے پاکستان مسلم لیگ(ن)کے صدرمیاں شہباز شریف سے تھا۔ اس حلقے سے بھی جواد احمد کو شکست کا سامنا کرنا پڑا اورشہباز شریف95 ہزار834ووٹ لے کرکامیاب رہے۔
اداکار ساجد حسن پاکستان پیپلز پارٹی کے پلیٹ فارم سے قومی اسمبلی کے حلقے این اے 256 سے انتخابی میدان میں اترے تھے تاہم صرف 7ہزار 587 ووٹ ہی حاصل کرسکے۔ جب کہ انہیں پاکستان تحریک انصاف کےامیدوارمحمد نجیب ہارون نے89 ہزار850 ووٹ حاصل کرکے ہرادیا-اداکارایوب کھوسہ بھی پاکستان پیپلز پارٹی کے امیدوار کی حیثیت سے کراچی کے حلقے پی ایس 101 سے انتخابی میدان میں اترےتھے، تاہم صرف5 ہزار 121 ووٹ ہی لے سکے جب کہ ان کے مقابل پاکستان تحریک انصاف کے امیدوار سید فردوس شمیم نقوی 20ہزار34 ووٹ لے کر کامیاب رہے۔
اداکارہ گل رعنا کراچی کے حلقے پی ایس 94 سے پاکستان پیپلز پارٹی کی امیدوار کی حیثیت سے الیکشن میں کھڑی ہوئی تھیں لیکن انہیں بھی شکست کا منہ دیکھنا پڑا انہیں عوام نے صرف 2ہزار458 ووٹ دئیے جب کہ ان کے مقابل ایم کیوایم کے امیدوار محمد وجاہت 32 ہزار729 ووٹ لے کر کامیاب رہے۔

شوبز

’منٹو‘ کا ٹریلر جاری

Published

on

’منٹو‘ کا ٹریلر جاری

بالی وڈ کے اداکار نواز الدین صدیقی کی فلم ’منٹو‘ کا ٹریلر جاری کر دیا گیا ہے۔ برصغیر کے مشہور افسانہ نگار سعادت حسن منٹو کی زندگی پر بننے والی ’منٹو‘ میں بالی وڈ اداکارہ و ہدایت کارہ نندتا داس نے ہدایت کاری کے فرائض سرانجام دیئے ہیں جبکہ یہ فلم بھارت سمیت دنیا بھر میں 21 ستمبر کو پیش کی جائے گی جس میں نواز الدین کے علاوہ پاریش راول اور رشی کپور بھی اہم کرداروں میں نظر آئیں گے۔

Continue Reading

شوبز

فلم کا پہلا ٹیزر

Published

on

فلم کا پہلا ٹیزر

سلمان خان کی فلم ’بھارت‘ کی ابھی کاسٹ کو فائنل ہوئے کچھ ہی وقت گزرا تھا کہ اب فلم کا پہلا ٹیزر بھی سامنے آگیا۔اس ٹیزر میں سلمان خان کو دکھایا تو نہیں، تاہم وہ فلم کا ایک اہم ڈائیلاگ ’بابو جی کہتے تھے، کچھ رشتے زمین سے ہوتے ہیں اور کچھ رشتے خون سے، میرے پاس دونوں ہی تھے‘ بولتے نظر آئے۔فلم ’بھارت‘ میں سلمان خان مرکزی کردار ادا کررہے ہیں، جبکہ ان کے ہمراہ کترینہ کیف، تبو اور دیشا پٹانی اہم کردار ادا کریں گی۔کترینہ کیف کا اس فلم میں دیشا پٹانی سے زیادہ اہم کردار ہوگا۔

فلم کا پہلا ٹیزر

Continue Reading

شوبز

جھانسی کی رانی

Published

on

جھانسی کی رانی

اداکارہ کنگنا رناوت بہت جلد اپنی فلم ’منی کارنیکا‘ میں جھانسی کی رانی لکشمی بائی کا کردارمیں نظرآئیں گی، جس کا پہلا آفیشل پوسٹر ریلیز کردیا گیا۔اس پوسٹر میں کنگنا رناوٹ کا انداز ان کی باقی فلموں سے کافی الگ دکھائی دے رہے ہے۔
پوسٹر میں دکھایا گیا کہ وہ جنگ کے میدان میں اپنے گھوڑے پر موجود لڑ رہی ہیں، جب کہ اس موقع پر ان کے ساتھ ان کی بیٹی بھی موجود ہے۔یہ پوسٹر فلم کے ہدایت کار کرش نے شیئر کیا۔
جھانسی کی رانی
’منی کارنیکا: دی کوئین آف جھانسی‘ فلم کی کہانی ’جھانسی کی رانی‘ یعنی لکشمی بائی کے گرد گھومتی ہے۔’جھانسی کی رانی‘ نے 1857 میں انگریزوں کے خلاف لڑی جانے والی جنگ آزادی میں بہادری سے انگریزوں کا مقابلہ کیا۔ان سے متعلق کہا جاتا ہے کہ وہ جنگ کے دوران زخمی ہونے کے بعد میدان سے نکل گئیں، اور ایک صحرا میں ایک فقیر کے پاس گئیں، جن سے انہوں نے کہا کہ وہ انہیں اس طرح جلادیں کہ ان کے وجود کی خاک بھی انگریزوں کو نہ ملے۔کہا جاتا ہے کہ ’جھانسی کی رانی‘ اس عمل سے انگریزوں کو پیغام دینا چاہتی تھیں کہ وہ اسے نہ تو زندہ پکڑ سکتے ہیں اور نہ ہی مری ہوئی حالت میں اسے دیکھ سکتے ہیں۔
اس فلم میں کنگنا کے ہمراہ اتل کلکرنی، سونو سود اور انکیتا لوکھنڈرے کام کرتی نظر آئیں گی۔فلم ’منی کارنیکا: دی کوئین آف جھانسی‘ اگلے سال 25 جنوری کو سینما گھروں میں ریلیز ہوگی-
جھانسی کی رانی

Continue Reading

مقبول خبریں