رشتوں کی ڈور میں الجھی کہانی

ٹی وی پروڈکشن میں بے پناہ اضافے کی وجہ سے جہاں چینلزکی ذمہ داری بڑھ گئی ہے وہیں رائٹر،پروڈیوسر،ڈائریکٹراور فنکاروں کے کندھوں کے بوجھ میں بھی اضافہ ہوگیاہے کیونکہ اب پاکستان میں مختلف چینلز سے پچاس کے قریب ڈرامے روزانہ نشر کئے جاتے ہیں جس سے ناظرین کے لئے چوائس کافی مشکل ہوجاتی ہے کیونکہ کوئی بھی اتنے ڈرامے تو نہیں دیکھ سکتا اس لئے جو ڈرامہ سب سے بہتر ہوتا ہے ناظرین بھی اسے ہی ترجیح دیتے ہیں۔اے پلس سے نشر ہونے والا ڈرامہ’حور پری‘ پہلے د ن سے ہی ناظرین کی اولین ترجیح بن گیاتھا کیونکہ اس نے بڑی کاسٹ اور بڑے ناموں پر مشتمل ڈراموں کو مات دی ہے۔عام طور یہی سمجھا جاتا ہے کہ ڈرامے کی کامیابی کے لئے وہ فنکارضروری ہیں جن کے نام پر ریٹنگ آتی ہے لیکن’حور پری‘ نے ثابت کیا ہے کہ ایسا ضروری نہیں ہے کیونکہ اگر کہانی اچھی ہو،جس کے ساتھ ایک اچھا اور سمجھدار ڈائریکٹر ہو جو ہر طرح کے فنکاروں سے کام لے سکتا ہوتو پھر کامیابی یقینی ہے۔اس کے ساتھ اچھا پروڈیوسر اور محنت کرنے والے فنکار بھی ہوں تو پھر سونے پر سہاگہ ہوجاتا ہے۔میرے خیال میں اشعر اصغر اس حوالے سے خوش قسمت ڈائریکٹر ہیں کہ انہیں ہر بار کامیابی اس لئے ملتی ہے کیونکہ وہ ٹیم کا انتخاب سوچ سمجھ کر اور مکمل منصوبہ بندی سے کرتے ہیں۔ان کی کامیابیوں کا تسلسل ’حورپری‘ کی صورت میں موجود ہے جس میں اگرچہ ثمن انصاری،سلیم شیخ،نادیہ افگن،حسیب خان،نسرین قریشی اور فرح طفیل جیسے سینئر فنکار موجود ہیں تو وہیں نئے فنکاروں کی کمی بھی نہیں لیکن پوری کاسٹ نے اپنی بہترین پرفارمنس دینے کی کوشش کی ہے اور اسی وجہ سے ڈرامہ تیزی سے مقبولیت کی سیڑھیاں چڑھ رہا ہے۔یہ ڈرامہ جہاں ٹیلی ویژن پر ناظرین کی اولین پسند ہے تو وہیں آن لائن بھی لاکھوں لوگ دیکھ رہے ہیں اور اسی وجہ سے یہ یوٹیوب کے ٹاپ ٹرینڈنگ میں شامل ہوچکا ہے۔


مبشرحسن کی پروڈکشن میں بنائے جانے والے اس سیریل کی کہانی ایک ایسی بیوہ (ثمن انصاری)کے گرد گھومتی ہے جس کی خوبصورتی اس کا جرم بن چکی ہے کیونکہ ہر رشتہ دار اسے اپنے جال میں پھانسنے کی کوشش میں مصروف رہتا ہے ۔دوجوان بیٹیوں کے ساتھ رہنے والی بیوہ ہی خوبصورت نہیں بلکہ اس کی بیٹیاں بھی لاکھوں میں ایک ہیں ۔جہاں کچھ لوگ ماں کے دیوانے ہیں اور ہر وقت اس کے ارد گرد منڈلاتے رہتے ہیں وہیں بہت سے نوجوان بیٹیوں کے پیچھے ہیں۔ یہ خاندان بہت سی مشکلات کے باوجود صبر شکر سے زندگی گزار رہا ہے لیکن اکثر رشتہ دار انہیں چین سے نہیں جینے دیتے اور آئے روز ایسے حالات پیدا کرتے رہتے ہیں جس سے ’حور پری‘کی مشکلات میں اضافہ ہورہا ہے ۔رشتوں کی ڈور میں الجھی ہوئی یہ کہانی اب مزید الجھتی جارہی ہے۔ڈرامے کی تیسری قسط میں اب کہانی کافی آگے بڑھتی دکھائی دے رہی ہے جس کے ساتھ ناظرین کی دلچسپی میں بھی اضافہ ہورہا ہے۔سینئرفنکاروں کے ساتھ ساتھ نئے فنکاروں نے بھی بہترین پرفارمنس کا مظاہرہ کیا ہے۔ڈرامے کے رائٹر کے رحمن نے معاشرتی برائیوں کے تمام پہلو اجاگر کئے ہیں اور ناظرین کو بتایا ہے کہ ایک خوبصورت بیوہ کی زندگی کس قدر مشکلات کا شکار ہوسکتی ہے۔کے رحمن کی تحریر کو سکرین پر خوبصورت معیاری دکھانے کے لئے اشعر اصغر نے جس قدر محنت کی ہے اس میں ان کے ڈی او پی راشدعباس بھی برابر کر شریک ہیں۔ڈرامے کی چوتھی قسط اتوار کو اے پلس سے نشرکی جائے گی۔

Watch 3rd Episode of My Drama Serial #HoorPari Today Sunday at 8:00 PM only on AplusDirected By: Muhammad Ashar AsgharWritten By: Khalil RehmanProduced By: Mubashir HassanDOP: Rashid AbbasAssociate Director: Shahid AkramAssistant Directors: Aneel JalalLine Producer : Jawad ButtMakeup Farah DibaCast: Saman Ansari, Saleem Sheikh, Nadia Afgan, Haseeb Khan, Fararh Tufail, Alezay Shah, Ammara Butt, Usman Buttt, Arman Ali Pasha ,Sarah Aijaz and Nasreen Qureshi

Posted by Muhammad Ashar Asghar on Saturday, 5 January 2019