مقبولیت کا نیا ریکارڈ۔۔۔100اقساط مکمل

ہم ٹی وی سے نشر ہونے والے سوپ’سانوری‘ کی سواقساط مکمل ہوگئی ہیں جوکسی ڈرامے کی کامیابی کا ایک واضح ثبوت ہے۔ڈرامے کی مقبولیت دیکھتے ہوئے اس کی اقساط میں اضافے کا فیصلہ پہلے ہی کرلیا گیا ہے۔عام طور پر جب بھی کسی چینل سے سوپ شروع کیا جاتا ہے تو اس کی اقساط فائنل نہیں ہوتیں اور اس بات کا فیصلہ مقبولیت کے پیش نظر ہی کیا جاتا ہے لیکن ’سانوری‘ وہ واحد سوپ ہے جس نے پہلی ہی قسط سے ناظرین کے دل میں جگہ بنالی تھی جس کے بعد رفتہ رفتہ اس کی پسندیدگی میں اضافہ ہی ہوتاگیا جس کا کریڈٹ نہ صرف رائٹر ،پروڈیوسر اور ڈائریکٹر کو جاتا ہے بلکہ کاسٹ بھی اس کی مستحق ہے کیونکہ ڈرامے میں زیادہ تعداد ان فنکاروں کی ہے جو بالکل نئے ہیں یا انہوں نے ابھی زیادہ کام نہیں کیا ہوا۔

ڈرامے کے تین فنکاروں زینب شبیر،اسامہ خان اور سحرخان کی پرفارمنس نے ڈرامے کی مقبولیت بڑھانے میں اہم کردار اداکیا۔ زینب شبیراور اسامہ خان کا یہ دوسرا ڈرامہ تھا لیکن سحرخان کو پہلی بار اس میں متعارف کرایا گیا جن کے کردار شمع نے مقبولیت کے نئے ریکارڈ قائم کئے۔ ان فنکاروں کا ٹرائی اینگل ناظرین کے دلوں میں اس طرح سماگیا کہ اب انہیں اس ڈرامے کی عادت سی ہوگئی ہے۔اجالا،تبریز اور شمع بچوں اور بڑوں سمیت سبھی کے پسندیدہ کردار بن گئے ہیں۔ ان تینوں کے علاوہ زین افضل اور ماہ نور خان بلوچ نے بھی متاثر کن پرفارمنس کا مظاہر ہ کیا ہے۔اس ڈرامے کی رائٹرعابدہ احمد اور ڈائریکٹر کامران اکبرخان بلاشبہ اس کامیابی پر مبارکباد کے مستحق ہیں۔

اپنی پہلی بڑی کامیابی بارے’کھوج‘سے گفتگو کرتے ہوئے سحرخان نے کہا کہ پہلے ہی ڈرامے کی سواقساط مکمل ہونے پر اللہ تعالی کی شکرگزار ہونے کے ساتھ تمام ناظرین کی بے حدمشکور ہوں جنہوں نے’سانوری‘کو شرف قبولیت بخشا۔ میرے لئے یہ پراجیکٹ خوش قسمتی کا باعث بنا کیونکہ اس نے مجھے راتوں رات سپرسٹار بنادیا۔ ایک سوال کے جواب میں سحرخان نے بتایا کہ آگے بھی کہانی بہت مزے کی ہوگی جو ناظرین کو یقینی طور پر پسند آئے گی۔انہوں نے کہا کہ میں ان تمام لوگوں کی بہت مشکور ہوں جنہوں نے یہاں ت ک پہنچنے میں کسی طرح بھی میری مدد کی۔