امریکہ طالبان مذاکرات، افغان صدر کا حیران کن ردعمل

کسی امن ڈیل کے بعد امریکی فوج کا انخلا ہونے کی صورت میں داخلی حالات ابتر ہو سکتے ہیں

امریکہ طالبان مذاکرات پر افغان صدر اشرف غنی نے حیران کن رد عمل دیتے ہوئے کہا کہ اس ڈیل کا سب سے زیادہ فائدہ داعش ہو گا۔

ذرائع نے بتایا ہے کہ افغان صدر کے مشیر نے انکشاف کیا ہے کہ امریکہ اور طالبان کی ڈیل سے داعش مزید مضبوط ہوسکتی ہے جبکہ امریکی فوجی انخلا پر داخلی حالات ابتر ہو سکتے ہیں۔ایک اعلیٰ افغان اہلکار نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ افغان طالبان اور امریکہ کے درمیان امن ڈیل کی صورت میں زور پکڑتی داعش مزید مضبوط ہو سکتی ہے۔

افغان صدر کے مشیر صدیق صدیقی کے مطابق کسی امن ڈیل کے بعد امریکی فوج کا انخلا ہونے کی صورت میں داخلی حالات ابتر ہو سکتے ہیں اورداعش میں شامل سخت نظریات کے حامل طالبان جنگجو بھی اندرونی مسلح انتشار میں اضافے کا باعث بن سکتے ہیں۔ صدیقی کے مطابق داعش میں شامل عسکریت پسندوں کا تعلق طالبان سے ہے۔ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ بعض صوبوں میں تعینات طالبان کمانڈروں نے بھی داعش میں شمولیت کا عندیہ دیا ہے۔

شاید آپ یہ خبریں بھی پسند کریں

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept