چین کی بھارت کو آخری وارننگ

ینگ کا کہنا تھا کہ 'چین کو مغربی سکیٹر میں چین کے علاقے کو انڈیا کے انتظامی دائرہ اختیار میں شامل کرنے پر ہمیشہ اعتراض ہے

چین نے بھارت کے زیر انتظام جموں و کشمیر کو دو حصوں میں تقسیم کرنے کے اقدام پر آخری وارننگ دیتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت لداخ سے نکل جائے تو ان کے لئے اچھا ہوگا۔

چین کی وزارت خارجہ نے بھارتی آئین کی شق 370 ختم کیے جانے اور جموں و کشمیر اور لداخ کو دو مرکزی خطوں میں تقسیم کیے جانے کے فیصلے پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ چین اور بھارت کو ایسے ‘یکطرفہ فیصلے’ کرنے سے گریز کرنا چاہیے جن سے خطے میں کشیدگی پیدا ہو۔ بیجنگ میں چین کی وزارت خارجہ کی ترجمان ہوا چون ینگ نے کہا کہ لداخ کو ایک الگ مرکزی خطہ بنائے جانے پرچین کو اعتراض ہے۔ ینگ کا کہنا تھا کہ ‘چین کو مغربی سکیٹر میں چین کے علاقے کو انڈیا کے انتظامی دائرہ اختیار میں شامل کرنے پر ہمیشہ اعتراض ہے۔’

چینی وزارت خارجہ کی ترجمان نے کہا کہ چین کے اس مستقل موقف میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔ ‘حال ہی میں انڈیا نے اپنے داخلی قانون میں یکطرفہ تبدیلی کر کے چین کے اقتدار اعلی کو نقصان پہنچایا ہے۔ اس طرح کا قدم بالکل ناقابل قبول ہے۔’ چین نے کہا کہ بھارت کو یکطرفہ طور پر متنازعہ سرحدی خطے کی موجودہ صورتحال میں ایسی کوئی تبدیلی نہیں کرنی چاہیے جو کشیدگی کو ہوا دے۔۔ آرٹیکل 370 ختم کیے جانے پر چینی وزارت خارجہ کی ترجمان نے کہا کہ کشمیر کے حوالے سے چین کا مؤقف بہت واضح ہے۔ بھارت اور پاکستان کو خطے کو کشیدگی سے بچانے کے لیے باہمی مذاکرات کے ذریعے اپنے تنازعات حل کرنے چاہئیں۔’

 

شاید آپ یہ خبریں بھی پسند کریں

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept