Khouj English Advertising Privacy Policy Contact Us
Connect with us

انٹرنیشنل

رواں برس افغانستان میں شام سے بدتر خوں ریزی کا خدشہ

Zeeshan Ali

Published

on

afghanistan

امریکی تجزیہ کاروں نے کہا ہے کہ خود کش دھماکوں، طالبان جنگجووﺅں کے سیکیورٹی فورسز کے چیک پوسٹوں پر مسلسل حملوں اور غزنی پر شدت پسندوں کے قبضے کے بعد افغانستان کے حالات شام سے زیادہ ہولناک ثابت ہو سکتے ہیں۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکی انسٹی ٹیوٹ برائے امن نے اپنی رپورٹ میں خبر دار کیا ہے کہ رواں سال افغانستان میں حالات شام سے زیادہ بد تر ہو سکتے ہیں۔ افغان جنگ کے 17 برسوں میں رواں سال ہونے والے پ±ر تشدد واقعات بدترین خانہ جنگی کی جانب اشارہ کر رہے ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی نئی افغان پالیسی بھی اپنے پیشرﺅں کی پالیسیوں سے زیادہ نقصان دہ ثابت ہوئی ہے جو تاحال کسی بڑی کامیابی سے ہمکنار نہیں ہو سکی ہے البتہ افغان میں طالبان مضبوط اور اتحادی کمزور ہوتے نظر ا? رہے ہیں۔

علاوہ ازیں انٹرنیشنل کرائسس گروپ نے بھی اپنی رپورٹ میں خبردار کیا ہے کہ رواں برس افغانستان میں ہونے والی جھڑپوں میں ہلاکتیں 20 ہزار سے تجاوز کر جائیں گی جس کی بنیادی وجہ کئی صوبوں میں ہونے والی قبضے کی جنگ ہے جب کہ خود کش دھماکوں اور دہشت گردی کے دیگر واقعات میں ہونے والی ہلاکتیں علیحدہ ہیں۔

واضح رہے کہ افغانستان میں طالبان جنگجووﺅں نے خوں ریز جھڑپ کے بعد غزنی کے بیشتر حصوں میں قبضہ حاصل کرلیا۔ اسی طرح دیگر صوبوں میں بھی شدت پسندوں کی پیش قدمی جارہی ہے اور کئی مقامات پر اتحادی افواج کو پسپائی کا سامنا رہا ہے۔

انٹرنیشنل

بریگزٹ معاہدے پر اتفاق ہوگیا

Published

on

brexit

برطانیہ اور یورپی یونین کے درمیان بریگزٹ معاہدے کے مسودے پر اتفاق ہوگیا، برطانوی وزیراعظم نے کابینہ کو اعتماد میں لینے کیلئے فوری طور پر اجلاس طلب کرلیا۔

خبررساں ایجنسی کےمطابق برطانیہ اور یورپی یونین نے طویل مذاکرات کے بعد برطانیہ کی یورپی یونین سے علیحدگی (بریگزٹ) کے معاہدے کے مسودے پراتفاق کرلیا ہے۔

برطانوی وزیراعظم تھریسا مے کی زیر صدارت کابینہ کا اجلاس جلد ہوگا جس کے بعد سرکاری سطح پر اتفاق رائے کا اعلان کیا جائے گا۔

دوسری جانب حکمران کنزرویٹو پارٹی کے چند اراکین نے بھی بریگزٹ معاہدے کے خلاف سامنے آگئے ہیں۔

سابق وزیرخارجہ بورس جانسن اور ایم پی جیکب ریس موک کا کہنا تھا کہ تھریسا مے نے ملک کا سودا کرلیا ہے، پارلیمنٹ میں اس ڈیل کےخلاف ووٹ دیں گے۔

حزبِ اختلاف کی لیبرپارٹی پارٹی کا مؤقف ہے کہ معاہدہ برطانیہ کیلئے سود مند ہونے کی توقع نہیں جبکہ لبرل ڈیموکریٹک پارٹی کے سربراہ کا کہنا ہے کہ وزیراعظم بریگزٹ ڈیل کو پارلیمنٹ سے منظورکرانےمیں ناکام ہوں گی۔

خیال رہے کہ رواں برس بریگزٹ کے معاملے پر وزیراعظم تھریسا مے سے اختلافات کی وجہ سے برطانوی وزیر خارجہ بورس جانسن اپنے عہدے سے مستعفی ہوگئے تھے۔

یاد رہے کہ جون 2016 میں ہونے والے ریفرنڈم میں 52 فیصد برطانوی عوام نے یورپی یونین سے الگ ہونے کے حق میں ووٹ دیا تھا جبکہ مخالفت میں 48 فیصد ووٹ پڑے تھے۔

برطانیہ نے 1973 میں یورپین اکنامک کمیونٹی میں شمولیت اختیار کی تھی تاہم برطانیہ میں بعض حلقے مسلسل اس بات کی شکایات کرتے رہے ہیں کہ آزادانہ تجارت کے لیے قائم ہونے والی کمیونٹی کو سیاسی مقاصد کے لیے استعمال کیا جارہا ہے جس کی وجہ سے رکن ممالک کی خودمختاری کو نقصان پہنچتا ہے۔

بریگزٹ کے حامیوں کا کہنا ہے کہ یورپی یونین سے علیحدگی کے بعد ابتداء میں معاشی مشکلات ضرور پیدا ہوں گی تاہم مستقبل میں اس کا فائدہ حاصل ہوگا کیوں کہ برطانیہ یورپی یونین کی قید سے آزاد ہوچکا ہوگا اور یورپی یونین کے بجٹ میں دیا جانے والا حصہ ملک میں خرچ ہوسکے گا۔

Continue Reading

انٹرنیشنل

فضائی حملہ، 60 طالبان ہلاک

Published

on

afghanistan

افغانستان کے صوبے غزنی میں طالبان کے قافلے پر غیرملکی اتحادی فوج کے فضائی حملے  میں 60 طالبان ہلاک ہوگئے۔

افغان حکام کے مطابق غزنی میں طالبان اور سیکیورٹی فورسز کے درمیان کئی روز جاری رہنے والی لڑائی میں 30 سیکیورٹی اہلکار بھی ہلاک ہوئے۔ 

پولیس ترجمان نے بتایا کہ گزشتہ رات غزنی ارذگان ہائی وے پر اتحادی فورسز نے طالبان کے قافلے پر فضائی حملہ کیا جس  کے نتیجے میں 60 طالبان ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے۔

دوسری جانب افغان فوج اور طالبان کے درمیان جھڑپیں صوبے وردک کے علاقے سید آباد میں بھی ہوئیں جس میں 9 افغان فوجی ہلاک اور 5 طالبان مارے گئے۔

صوبے ارذگان میں ہونے والی جھڑپوں میں 10 سیکیورٹی اہلکار اور 15 طالبان ہلاک ہوئے۔

یاد رہے کہ گزشتہ دنوں بھی افغان فورسز نے غزنی میں طالبان کے ٹھکانوں پر فضائی حملے کیے تھے جس میں طالبان کا بھاری جانی نقصان ہوا۔

Continue Reading

انٹرنیشنل

سعودی عرب میں امریکی سفیر تعینات

Published

on

jhon phlip

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مشرق وسطیٰ میں تعلیم حاصل کرنے والے اور عراق جنگ کے دوران اہم عہدے پر فائز سابق فوجی جنرل جان فلپ ابی زید کو سعودی عرب میں سفیر مقرر کردیا ہے۔ سعودی عرب میں امریکا کے آخری سفیر جوزف ویسٹ پال جنوری 2017 میں سبکدوش ہوئے تھے۔

سعودی عرب میں نئے امریکی سفیر جون پال ابی زید ریٹائرڈ فوجی افسر ہیں جو امریکی مرکزی کمانڈ کے سب سے زیادہ عرصے تک سربراہ رہنے کا اعزاز بھی رکھتے ہیں اور عراق جنگ 2003 سے 2007 تک مشرق وسطیٰ میں تعینات رہے۔

67 سالہ سابق فوجی کی ریاض میں سفیر مقرر کیے جانے کو صحافی جمال خاشقجی کے استنبول کے سعودی قونصل خانے میں قتل ہونے کے بعد سعویہ اور امریکا کے درمیان کشیدگی کے تناظر میں دیکھا جا رہا ہے۔

امریکی صدر نے حالیہ مڈٹرم الیکشن میں انتخابی مہم کے دوران جلسوں سے خطاب کے دوران سعودی عرب کے فرماں روا شاہ سلمان بن عبدالعزیز پر کڑی تنقید کی تھی اور اب دیکھنا ہے کہ سخت گیر سابق فوجی جنرل کی بطور سفیر دونوں ممالک کے درمیان تلخی کو کس حد تک کم کرپاتے ہیں۔

Continue Reading
Advertisement

مقبول خبریں