مصر; بم ناکارہ بناتے ہوئے اہلکارجاں بحق

بین الاقوامی خبررساں ادارے کے مطابق بارودی سرنگوں کو ناکارہ بنانے کے ماہر اہلکار مصطفیٰ عابد قاہرہ کے نواح میں واقع شہر نصر کے قطبی چرچ میں چھپائے گئے بم کو ناکارہ بناتے ہوئے جاں بحق ہوگئے جب کہ دو اہلکار شدید زخمی ہیں۔

زخمی پولیس اہلکاروں کو قریبی اسپتال منتقل کردیا گیا ہے جہاں ایک زخمی کی حالت نازک بتائی جارہی ہے۔ مصر کے صدر عبدالفتح السیسی نے جاں بحق افسر کے لواحقین سے تعزیت کا اظہار کیا ہے اور اسپتال میں زخمی اہلکاروں کی عیادت بھی کی۔

پولیس حکام کا کہنا ہے کہ بم کو ایک تھیلے میں بند کرکے چرچ کی چھت پر رکھا گیا تھا، بم کی موجودگی کی اطلاع پر خصوصی ٹیم کو طلب کیا گیا تھا۔ کسی شدت پسند جماعت نے بم نصب کرنے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔

مصر کی آبادی کا 10 فیصد عیسائیوں کے ایک گروہ ’قطبی مسیحیوں‘ پر مشتمل ہے، یہ مصر میں مضبوط ترین اقلیتی گروہ ہے تاہم انہیں شدت پسندوں کی جانب سے حملوں کا سامنا رہا ہے۔ دو سال میں 200 سے زائد قطبی مسیحیوں کو قتل کیا گیا۔

واضح رہے کہ قطبی مسیحیت کا پورا نام  قبطی اسکندریہ کا قبطی راسخ الاعتقاد کلیسا ہے اور ایک روایت کے مطابق انجیل کے مُبلغ مرقس نے پہلی صدی عیسوی میں اس کی بنیاد رکھی تھی۔ قطبی مسیحیوں نے 451 میں بنیادی چرچ سےعلیحدہ ہوکر اپنی الگ شناخت اختیار کی۔