تعلق داعش سے، کئی کارروائیوں میں سہولت کار

سابق ایڈیشنل آئی جی سی ٹی ڈی نے جے آئی ٹی کو اپنے بیان میں کہا ہے کہ ذیشان کا تعلق داعش سے تھا اور وہ کئی کارروائیوں میں سہولت کار بھی تھا۔

سانحہ ساہیوال کیلیے بنائی گئی جے آئی ٹی کے سامنے سی ٹی ڈی کے ملوث اہلکاروں اور آپریشن کے دوران فون پر رابطے میں رہنے والے افسران کے بیانات قلمبند کرانے کاسلسلہ جاری ہے۔

ذرائع کے مطابق سابق ایڈیشنل آئی جی سی ٹی ڈی رائے طاہر جمعرات کو جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہوئے، انھوں نے بتایاکہ ساہیوال آپریشن سے 2 روز قبل 17جنوری کو ذیشان کی گاڑی کا نمبرLEA6683-12 سیف سٹی اتھارٹی کی واچ لسٹ میں شامل کرا دیاگیاتھا۔

انہوں نے بتایا کہ کہ 19جنوری کو صبح 9:30 بجے گاڑی نے مانگا منڈی کو عبور کیا توسیف سٹی کیمروں نے الرٹ جاری کردیا جس پر سیف سٹی انتظامیہ نے سی ٹی ڈی کو گاڑی شہرسے باہرجانے کی اطلاع دی، حکام نے بلاتاخیر لاہورسے ایک ٹیم ایس ایس پی جواد قمرکی سربراہی میں ان کے پیچھے روانہ کی جبکہ دوسری جانب ساہیوال میں بھی سی ٹی ڈی ٹیم کوسفید گاڑی سے متعلق آگاہ کیاگیا، جیسے ہی مشتبہ گاڑی نے ساہیوال ٹول پلازا کراس کیا تو سی ٹی ڈی ساہیوال کی ٹیم نے تعاقب شرو کردیا اور قادرآباد پہنچتے ہی گاڑی روکنے کیلیے ٹائروں پر گولیاں ماریں لیکن اس کے باوجود ذیشان نے گاڑی نہیں روکی۔

سابق ایڈیشنل آئی جی نے کہا کہ آپریشنل ٹیم کو خدشہ تھاکہ گاڑی میں موجود چاروں افراد دہشت گرد ہیں اور وہ تخریب کاری کیلیے خودکش جیکٹس اور دھماکا خیزمواد ساتھ لے جارہے ہیں، گاڑی کے بائیں جانب پچھلے دروازے کے شیشہ پرکالا رنگ ہونے کی وجہ سے اہلکاروں کو بچوں کی موجودگی کاعلم نہ ہوسکا، فائرنگ شروع ہوتے ہی اگلی سیٹ پربیٹھے مہر خلیل نے اپنی بیٹی منیبہ اور پچھلی سیٹ پر اس کی بیوی نبیلہ نے باقی دونوں بچوں عمیر اور ہادیہ کوفوری طورپر اپنے پیروں میں بٹھالیا، ان کے نیچے جھکنے کی وجہ سے آپریشنل ٹیم کو تاثر ملا کہ وہ بارودی مواد کی مددسے حملہ کرنے لگے ہیں جس کے فوری بعد اہلکاروں نے فرنٹ اسکرین پرفائرکیے، 2سے 3گولیاں ڈرائیونگ سیٹ پر بیٹھے ذیشان کولگیں اور گاڑی دیوار سے جاٹکرائی۔

You might also like

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept