پلاسٹک پر پابندی، حکومت کی نئی آزمائش

سینٹر مشاہد حسین نے حکومت سے پلاسٹک پر پابندی کی سفارش کرتے ہوئے کہا کہ حکومت پلاسٹک کا استعمال بند کروائے۔ 

قائمہ کمیٹی کے اجلاس کے دوران وزارت موسمیاتی تبدیلی کے حکام کا کہنا تھا کہ پلاسٹک بیگز کا فوری طور پر کوئی متبادل نہیں ہے۔ حکام نے بتایا کہ پلاسٹک بیگز کی جگہ بائیو ڈی گریڈ ایبل بیگز قیمت کے اعتبار سے مہنگا ہے جو عام بندہ کی دسترس میں نہیں ہوگا۔ اسلام آباد کے چند بڑے شاپنگ مالز میں پلاسٹک بیگز کا استعمال ختم کر دیا ہے۔ چیئرمین کمیٹی مشاہد حسین سید نے بتایا کہ ہم اس پر اس لئے پابندی نہیں لگا سکتے کہ اس شعبے سے ہزاروں لوگوں کا روزگار وابستہ ہے۔ پارلیمنٹ کو سب سے پہلے پلاسٹک فری بنانے کیلئے چیئرمین سینٹ اور سپیکر قومی اسمبلی کو کہوں گا، اس کے بعد تمام سرکاری اداروں کو پلاسٹک فری بنانا ہے۔ وزیر مملکت زرتاج گل نے کہا کہ ہماری حکومت کا پورا فوکس کلین گرین پاکستان پر ہے۔ وزارت منصوبہ بندی وترقی پلاسٹک سے چھٹکارا پانے کے لیے اقدامات کر رہی ہے۔

وزارت موسمیاتی تبدیلی نے پلاسٹک پر ٹیکس لگانے کی تجویز دی ہے تا کہ اس کے استعمال کو روکا جا سکے۔ وزارت کو اس ضمن میں ارکان پارلیمنٹ کی سپورٹ چاہیے۔ مئیر اسلام آباد شیخ عنصر نے کہا کہ پلاسٹ کی روک تھام کے لیے حکومت کے تمام احکامات پر عمل درآمد ہوگا۔ اسلام آباد کو پلاسٹک فری بنانے کیلئے ایکشن پلان بنانے کی ضرورت ہے۔ ایکشن پلان وزارت موسمیاتی تبدیلی تیار کرے گی۔

You might also like

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept