ریاست محض سامراجی ایجنڈے کی تکمیل میں مصروف ہے: عالیہ حیدر

لاہور پریس کلب کے سامنے کوئٹہ میں ہونے والی حالیہ دہشتگردی کی مذمت میں نیشنل سٹوڈنٹس فیڈریشن اور سول سوسائٹی کا احتجاجی مظاہرہ ہوا مظاہرے سے عالیہ حیدر, ارشاد خان, پنجاب یونیورسٹی کے پشتون کونسل کے سابق رہنما مزمل خان, این ایس ایف پاکستان کے سابق مرکزی صدر صابر علی حیدر اور دیگر نے خطاب کیامقررین کا کہنا تھا دہشت گردی کو فرقہ واریت کہہ کر ٹال دینا ریاست کی اپنے فرائض سے غفلت ہے دہائیوں سے ریاست عوام کے پیسوں سے آپریشنز پر آپریشنز کر رہی ہے. جھوٹے دعوے کر رہی ہے کہ ملک سے دہشتگردی کا صفایا ہونے گیا ہے نگر حالیہ دہشتگردی نے ریاست کی سنجیدگی کا پردہ فاش کر دیا ہے حالیہ دہشتگردی سے پتہ چلتا ہے کہ حکومت کی ترجیحات کیا ہیں ایک عام آدمی وہ شیعہ ہو یا سنی مسلمان ہو یا ہندو پر ایک اپنا پیٹ کاٹ کے دفاعی اداروں کو دیتا ہے تاکہ ان کی جان کی حفاظت ہو سکے مگر لگتا ہے کہ عوام کی حفاظت ریاست کے ایجنڈے پر ہے ہی نہیں ریاست محض سامراجی ایجنڈے کی تکمیل میں مصروف نظر آتی ہے اگر کوئی عقیدہ رکھنا ہی ایک عام آدمی کا جرم بن جائے تو ایسے سماج کو صرف انارکی ہی کہا جا سکتا ہے جہاں "جس کی لاٹھی, اس کی بھینس” کا قانون نافذ ہوحکمران طبقات بس اپنے اقتدار کے لئیے ایک دوسرے سے گالم گلوچ اور محلاتی سازشوں میں مصروف ہیں ریاست نے اگر ہوش کے ناخن نہ لئے تو کل کو عوام اپنی جان بچانے کا بندوبست خود کر لیں گے ریاست پر امن عوام کو پر امن ہی رہنے دے مظاہرے کا اختتام شدید نعرے بازی سے ہوا۔