ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان کو تشویشناک خبر سنا دی

تجارتی جنگ کے حل کیلئے 90 دن کا جو حالیہ وقفہ لیا گیا ہے،اس دوران جو ڈیوٹیاں اور ٹیکس عائد کئے جائیں گے

ایشیائی ترقیاتی بینک کی طرف سے پاکستان کیلئے تشویشناک خبرآگئی۔ کھوج نیوز ذرائع کے مطابق ایشیائی ترقیاتی بینک نے امریکہ اور چین کے تجارتی تنازع کے باعث جنوبی ایشیا کے ترقی پذیر ممالک کی معاشی ترقی کی شرح پر منفی اثرات کی نشاندہی کی ہے جبکہ پاکستان کی معیشت پر بھی تشویش کا اظہار کیا ہے۔

منیلا فلپائن میں اے ڈی بی کے مرکزی آفس سے جاری تازہ ترین اکنامک آؤٹ لک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ امریکہ اور چین میں جاری تجارتی جنگ کے پورے خطے کی تجارت اور معاشی ترقی پر منفی اثرات مرتب ہوں گے، اس تجارتی جنگ کے حل کیلئے 90 دن کا جو حالیہ وقفہ لیا گیا ہے،اس دوران جو ڈیوٹیاں اور ٹیکس عائد کئے جائیں گے، ان پر عملدرآمد کے بعد ہی معلوم ہوگا کہ دونوں بڑی طاقتوں کے مابین تجارتی تنازع طے ہوا یا نہیں۔

رپورٹ میں پیشگوئی کی گئی ہے کہ جنوبی ایشیا کے ترقی پذیر ممالک کی معاشی ترقی کی شرح 7.2 کے بجائے 7.1 فیصد رہے گی۔ رپورٹ میں پاکستان کی معیشت کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ پاکستان میں بیرونی ادائیگیوں کا عدم توازن برقرار ہے اور 30 جون تک ختم ہونے والے مالی سال کی آخری سہ ماہی میں زرمبادلہ کے ذخائر مسلسل کمی کا شکار ہیں، صرف جولائی تا اکتوبر پاکستانی روپیہ کی قدر میں امریکی ڈالر کے مقابلے میں 14 فیصد کمی ہوئی، افراط زر کی شرح اکتوبر میں بڑھ کر 6.8 فیصد تک پہنچ گئی ہے جو اس سے پہلے کے تین ماہ کے دوران 4 فیصد تھی۔

You might also like

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept