رانا ثناء اللہ کیس، وفاقی حکومت کا حیران کن مطالبہ

وفاقی وزارت قانون نے راناثناء اللہ کیس کی سماعت کرنے والے جج مسعود ارشد کو تبدیل کرنے کے لیے رجسٹرار لاہور ہائیکورٹ کو خط لکھ دیا

مسلم لیگی رہنماء رانا ثناء اللہ کے کیس میں وفاقی حکومت نے حیران کن مطالبہ کر دیا۔ کھوج نیوز ذرائع کے مطابق رانا ثناء اللہ کیس وفاقی وزارت قانون نے جج کی تبدیلی کا مطالبہ کر دیا۔

ذرائع کے مطابق وفاقی وزارت قانون نے راناثناء اللہ کے کیس کی سماعت کرنے والے اے این ایف کے جج مسعود ارشد کو تبدیل کرنے کے لیے رجسٹرار لاہور ہائیکورٹ کو خط لکھ دیا۔ خط میں یہ مؤقف اختیار کیا گیا کہ منشیات سمگل کیس کے ملزم لیگی رہنما رانا ثناء اللہ کے مقدمے کو سننے والے جج کو تبدیل کیا جائے۔

لاء اینڈ جسٹس ڈویژن کی جانب سے لکھے گئے خط کے مطابق اے این ایف کے جج مسعود ارشد کو سات فروری 2017 کو عرصہ تین سال کے لیے ڈیپوٹیشن پر لاہور میں خصوصی عدالت برائے انسداد منشیات کے جج کا چارج دیا گیا تھا۔ مبینہ طور پر اے این ایف کے جج کی غیر جانبداری اور ساکھ کے مسائل سامنے آئے ہیں۔ خط میں یہ کہا گیا کہ رجسٹرار یہ خط لاہور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس کے سامنے رکھیں تاکہ مذکورہ جج کی جگہ انسداد منشیات کی خصوصی عدالت میں کسی غیر جانبدار جج کو تعینات کیا جا سکے۔

You might also like

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept