فردوس عاشق اعوان کی بلاول بھٹو پر شدید تنقید

بلاول کو کشمیر کی بجائے کراچی کی فکر کرنی چاہیے کیونکہ پیپلز پارٹی اور سندھ حکومت نے کراچی کا بیڑا غرق کر دیا ہے

وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے چیئرمین پیپلز پارٹی پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ بلاول کشمیر کی نہیں کراچی کی فکر کریں۔

فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ بلاول بھٹو زرداری نے پریس کانفرنس پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ بلاول کو کشمیر کی بجائے کراچی کی فکر کرنی چاہیے کیونکہ پیپلز پارٹی اور سندھ حکومت نے کراچی کا بیڑا غرق کر دیا ہے اور سندھ حکومت کو ملنے والے فنڈز خود ہڑپ کر جاتے ہیں لیکن کراچی میں کوئی ترقیاتی کام نہیں ہوتے۔ پیپلز پارٹی اور سندھ حکومت نے کراچی والوں کو اپنا غلام بنایا ہوا ہے کراچی میں شہری پینے کے صاف پانی کو ترستے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن کے علاوہ پیپلز پارٹی نے بھی اپنے دور حکومت میں عوام کو دونوں ہاتھوں سے لوٹا انہوں نے بھی عوام کی فلاح و بہبود کے لئے کوئی کام نہیں کیا بلکہ آئی ایم ایف سمیت دیگر ہمسایہ ممالک سے قرضہ لے کر خود کھاتے رہے اور پاکستان کو دن بدن قرضوں میں ڈوبتے رہے۔

فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ معاشی محاذ پر ڈکیتیاں اور چوریاں ہوئیں، اس کے لیے این آر او ملنا ناممکن ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ معاشی محاذ پر ڈاکووں کا صفایہ کرنا ہے، جغرافیائی محاذ پر بھی چیلنجز کا سامنا کرنا ہے، دونوں محاذوں پر قوم کے سامنے سرخرو ہونا ہے۔ وزیراعظم کی معاون خصوصی نے کہا کہ جعلی اکاؤنٹس کیس میں فریال بی بی کے اکاؤنٹ میں ٹی ٹی کون کراتا رہا اور بینیفشری کون تھا، یہ دیکھنا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ قوم نہیں چاہتی کہ ہم سیاست میں سمجھوتہ کریں، ہمیں اندرونی و بیرونی محاذ پر آئین و قانون کی بالا دستی کو یقینی بنانا ہے۔ فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی لعن طعن کے بجائے سندھ حکومت کی کارکردگی پر نظر رکھے۔انہوں نے مزید کہا کہ پیپلز پارٹی سندھ میں آئین و قانون کی بالا دستی یقینی بنائے اور صوبے کو کرپشن کے شکنجے سے آزاد کرائے۔ان کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی سندھ میں کرپشن پر زیرو ٹالرنس کا اعلان کرے اور بلاول اپنی پھپھی سے اس کا آغاز کریں۔وزیراعظم کی معاون خصوصی نے کہا کہ کرپشن کے خلاف تمام اقدامات اس حکومت کی ذمہ داری ہے۔

You might also like

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept