دھمکیاں مل رہی ہیں، تحفظ فراہم کیا جائے، لیڈی کانسٹیبل

فائزہ نواز نے کہا کہ وکیل نے گاڑی مرکزی داخلی راستے پر کھڑی کرنے سے منع کرنے پربدتمیزی کی، اسی دوران وکیل نے تھپڑ رسید کردیا

وکیل کی بدسلوکی کا شکار لیڈی کانسٹیبل فائزہ نواز کا کہنا ہے کہ جب عزت نفس پر حملہ ہو تو کوئی لڑکی خاموش نہیں رہ سکتی۔فائزہ نے کہا کہ نہ سیاست کر رہی ہوں نہ اپنے محکمے کی طرف سے بول رہی ہوں۔ فائزہ نواز نے کہا کہ وکیل نے گاڑی مرکزی داخلی راستے پر کھڑی کرنے سے منع کرنے پربدتمیزی کی، اسی دوران وکیل نے تھپڑ رسید کردیا۔

شیخوپورہ کے علاقے فیروزوالا میں وکیل کے مبینہ تشدد کا نشانہ بننے والی پولیس کانسٹیبل فائزہ نواز کا کہنا ہے کہ ملازمت سے استعفیٰ نہیں دیا، دھمکیاں دی جارہی ہیں، تحفظ فراہم کیا جائے۔فائزہ نواز کا کہنا تھا کہ وہ تشدد کے ایشو پر سیاست نہیں کرنا چاہتیں، لیکن جب کسی خاتون کی عزت نفس پر حملہ ہو تو وہ خاموش نہیں رہ سکتی۔

فائزہ نواز نے اپنے ساتھ پیش انے والے واقعے کی تفصیل بتاتے ہوئے بتایا کہ ‘دوپہر ایک بجے میں ڈیوٹی پر تھی، وکیل نے وہاں آکر اپنی کار پارک کردی، منع کیا تو وکیل صاحب غصے میں آ گئے اور گالیاں دینا شروع کر دیں، میں نے وکیل سے کہا کہ آپ پڑھے لکھے ہیں، اتنے میں وکیل نے تھپڑ مار دیا۔لیڈی کانسٹیبل نے مزید بتایا کہ ‘مجھے بچانے والا کوئی نہیں تھا، میں ڈی ایس پی کے دفتر گئی اور سارا واقعہ بتایا’۔

شاید آپ یہ خبریں بھی پسند کریں

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept