Khouj English Advertising Privacy Policy Contact Us
Connect with us

پاکستان

طویل لوڈ شیڈنگ جاری

Rashid Saeed

Published

on

شدید گرمی کے دوران بجلی کی طویل لوڈ شیڈنگ نے شہریوں کی زندگی اجیرن کردی۔
لاہور میں چوتھے روز بھی لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ جاری ہے اور 6 سے 8 گھنٹے تک بجلی کی بندش پر شہری بلبلا اٹھے۔ مختلف علاقوں اقبال ٹاؤن، رحمان پورہ، مسلم ٹاؤن میں رات 2 بجے سے بجلی غائب ہے۔ شدید گرمی میں بجلی نہ ہونے کی وجہ سے شہریوں کا برا حال ہے جبکہ پانی بھی نایاب ہے۔ شہری پانی کی قلت کیخلاف سڑکوں پر نکل آئے اور شدید احتجاج کیا۔ پیکو روڈ پر مظاہرین نے ٹائر جلائے اور رکاوٹیں کھڑی کرکے سڑک بند کردی۔ لاہور الیکٹرک سپلائی کمپنی (لیسکو) حکام کا موقف ہے کہ بجلی کا شارٹ فال تین ہزار میگاواٹ تک جا پہنچا ہے، مجموعی طلب 21 ہزار میگاواٹ جبکہ پیداوار 18 ہزار میگاواٹ ہے، لہذا ان علاقوں میں لوڈ شیڈنگ کے دورانیے میں اضافہ کیا گیا ہے جہاں بجلی چوری ہوتی ہے اور اب وہاں 4 سے 6 گھنٹے لوڈشیڈنگ کی جا رہی ہے۔

Advertisement
Click to comment

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

پاکستان

جعلی ڈگریاں فروخت کرنیوالا ٹیچر

Published

on

fake degree

اینٹی کرپشن حکام نے ملتان میں جامعہ کراچی کی جعلی ڈگریوں کی فروخت کے الزام میں سرکاری اسکول کے ایک ٹیچر کو گرفتار کرلیا۔اینٹی کرپشن حکام کے مطابق گورنمنٹ ہائی اسکول بلند پور کے ٹیچر محمد نواز پر 3 لاکھ روپے کے عوض ایک لڑکی کو بی اے کی جعلی ڈگری دینے کا الزام ہے۔اینٹی کرپشن حکام نے بتایا کہ دوران تحقیقات ملزم نے 4 افراد کو بی  اے اور ایل ایل بی کی ڈگریاں دینے کا بھی اعتراف کیا۔

حکام کے مطابق ملزم کو جامعہ کراچی کے عملے کے بعض افراد ڈگریاں فراہم کرتے ہیں، جنہیں وہ فروخت کردیتا ہے۔

Continue Reading

پاکستان

100 سے 150 روپے کا چالان

Published

on

karachi

ٹریفک پولیس کی جانب سے چالان کرنے پر گزشتہ روز خود سوزی کی کوشش میں جھلس جانے والے رکشہ ڈرائیور کی عیادت کے بعد کراچی پولیس چیف ڈاکٹر امیر شیخ نے ٹریفک اہلکاروں کو ہدایت کی ہے کہ رکشے والوں کا 100 سے 150 روپے سے زائد کا چالان نہ کیا جائے۔
واضح رہے کہ گزشتہ روز صدر تھانے کے باہر ایک رکشہ ڈرائیور خالد نے خود سوزی کی کوشش کی تھی، جسے زخمی حالت میں اسپتال منتقل کیا گیا تھا، جہاں اس کا علاج جاری ہے۔

رکشہ ڈرائیور نے خودسوزی کی کوشش سے قبل اپنے خط میں تحریر کیا تھا کہ وہ خودکشی گھریلو پریشانی یا کسی اور وجہ سے نہیں کر رہا، بلکہ اے ایس آئی حنیف نے اُس سے 50 روپے رشوت طلب کی اور انکار پر چالان کردیا۔

Continue Reading

پاکستان

2 سال سے تشدد

Published

on

kinza


راولپنڈی میں تشدد کا نشانہ بنائی گئی 11 سالہ گھریلو ملازمہ کی بہن کا دعویٰ ہے کہ مالک اور مالکن کنزہ کو 2 سال سے تشدد کا نشانہ بنا رہے تھے، جس کی وجہ سے وہ واپس نہیں جانا چاہتی تھی اور پڑھنا چاہتی تھی۔
واضح رہے کہ راولپنڈی کی ولایت کالونی میں خاتون سرکاری افسر عمارہ ریاض اور ان کے خاوند ڈاکٹر محسن کی جانب سے 11 سالہ گھریلو ملازمہ کنزہ پر تشدد کی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری نے اس کا نوٹس لیا تھا۔

فیصل آباد کے علاقے سمندری کی رہائشی کنزہ کا تعلق انتہائی غریب گھرانے سے ہے، جہاں اس کے والد نے 3 سال پہلے محض 5 ہزار روپے ماہانہ تنخواہ پر اپنی 11 سالہ بیٹی کنزہ کو ملازمت کے لیے راول پنڈی بھیجا تھاکنزہ کی بڑی بہن کا کہنا ہے کہ شروع کا ایک سال تو سکون سے گزرا لیکن گزشتہ دو سالوں سے کنزہ کو تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا تھا، جب تشدد زیادہ بڑھا تو اُس نے بھاگ کر پڑوسیوں کے گھر میں پناہ لے لی تھی۔

دوسری جانب اہلخانہ کا کہنا ہے کہ پولیس سمندری سے کنزہ اور اس کے والد کو لے کر راولپنڈی چلی گئی ہے، تاکہ حقائق سامنے لائے جاسکیں۔

Continue Reading
Advertisement

مقبول خبریں